Circle Image

عمانوئیل نذیر مانؔی

@Emmanuel

تُو ہے میری جان زمانہ کیا جانے
تُجھ پہ مَیں قربان زمانہ کیا جانے
سب کہتے ہیں میری آنکھیں ہنستی ہیں
لیکن دِل ویران زمانہ کیا جانے
تُجھ کو بُھول مَیں جاؤں دُنیا کہتی ہے
کب ہے یہ آسان زمانہ کیا جانے

0
16
پُھول ہیں جس کے ہاتھوں میں
خُوشبو اُس کی باتوں میں
دِن کو بے کل رہتا ہے
اور بے چین وہ راتوں میں
کر ہی ڈالی دِل کی بات
مًیں نے باتوں باتوں میں

18
تیرا میرا مِلنا مُشکل
پُھول کا باغ میں کِھلنا مُشکل
سچّا میں اِنسان ہوں لیکن
سچّی بات ہے لِکھنا مُشکل
اپنے دور کا سورج ہوں مَیں
میرا اب ہے ڈھلنا مُشکل

10
ہم جو مِلے ہیں ساون میں
لوگ جلے ہیں ساون میں
کتنے گہرے زخم تھے وہ
اب جو سِلے ہیں ساون میں
جیتی بازی پیار کی ہم
ہار چلے ہیں ساون میں

8
یوں سمجھو اوقات کی خاطر
ہم بدلے حالات کی خاطر
پتّھر دل بھی پگھلے دیکھے
آنکھوں میں برسات کی خاطر
شام کو میلہ لگتا ہے اب
میری تنہا ذات کی خاطر

18
مُجھے اِس غم کے دریا کا کِنارا ہی نہیںں مِلتا
کہ ڈُوبا اس طرح سے ہوں سہارا ہی نہیں ملتا
مُجھے اب آسمانوں کو بھی شاید کھوجنا ہوگا
جو اُس کی طرح سے چمکے سِتارا ہی نہیں مِلتا
مرے شعروں کو سمجھیں گے جہاں والے بھلا کیسے
یہاں تو دل لگی میں کوئی ہارا ہی نہیں ملتا

9
بخت تُونے ہمارے سنوارے وطن
میرے پیارے وطن میرے پیارے وطن
پُھول، خوشبو، ہوائیں یہ پربت سبھی
میری آنکھوں کے ہیں چاند تارے وطن
میرے پیارے وطن میرے پیارے وطن
تُجھ کو مل کے بنائیں گے جنت نُما

10
لوٹ کر آئے نہیں شہر سے جانے والے
جانے کس دیس میں جاتے ہیں نہ آنے والے
ہم نے ہر بار وفاؤں کی سزا پائی ہے
ہم نے دھوکے یہاں کھائے ہیں نہ کھانے والے
ہم نے اِس کارِ محبت میں قدم رکھا تھا
ہم وہ عاشق ہیں میاں دشت بسانے والے

0
2
26
اب بہکنے سے نہ روکے کوئی
بس تڑپنے سے نہ روکے کوئی
ہم اُڑانوں پہ یقیں رکھتے ہیں
ہم کو اڑنے سے نہ روکے کوئی
ہم نے مانگی تھی دعا بارش کی
اب برسنے سے نہ روکے کوئی

0
7
غریبِ شہر تو کب سے دہائی دیتا ہے
امیرِ شہر کو اونچا سنائی دیتا ہے
کہ تُجھ سے آگے مجھے کچھ نظر نہیں آتا
وہ میری آنکھ کو تُجھ تک رِسائی دیتا ہے
کسی کسی پہ ہی آتا ہے پیار اُس کو بھی
کسی کسی کو وہ ساری خُدائی دیتا ہے

0
15
سب دُنیا سے پیارا ہوں مَیں
تیری آنکھ کا تارا ہوں مَیں
ایسے دُنیا دیکھ رہی ہے
جیسے ایک نظارہ ہوں مَیں
اُس سے میری قیمت پوچھو
جِس کو جان سے پیارا ہوں مَیں

0
11
غم کے دریا کو پار کر لوں گا
مَیں ترا انتظار کر لوں گا
مَیں تری ایک مُسکراہٹ پر
زندگانی نثار کر لوں گا
عشق کو تُم خطا سمجھتے ہو
یہ خطا بار بار کر لوں گا

0
15
خواب اِک ہولناک دیکھا ہے
اِس لئے دل شدید دھڑکا ہے
تیری ہستی میں تیری مستی میں
زندگی کا سراغ پایا ہے
کِس نے ایسے کسی کو کب چاہا
جِس طرح میں نے تُجھ کو چاہا ہے

0
14
اے خُدا اب دِکھائی دے مجھ کو
درد و غم سے رہائی دے مُجھ کو
میری آنکھوں کو وہ بصارت دے
تیری صُورت دِکھائی دے مجھ کو
تُو چھپا کائنات میں ہے کہاں
تیری آہٹ سنائی دے مجھ کو

0
9
میرے دِل کے قریب تھا پہلے
کوئی میرا حبیب تھا پہلے
اپنے لفظوں سے اب وہ ڈرتا ہے
جو بظاہر ادیب تھا پہلے
دوستوں میں شُمار ہوتا ہے
جو کہ میرا رقیب تھا پہلے

0
12
پہلی بارش برسی ہے
دل کی مٹی مہکی ہے
میں نے ساون آنکھوں میں
پیار کی بدلی دیکھی ہے
چاند اترا ہے ندّی میں
ندّی نیند سے جاگی ہے

0
6
تمہیں مبارک تمام خوشیاں مَیں آج سب کچھ ہی ہار لوں گا
یہ چار دن ہیں جو زندگی کے بِنا تمہارے گزار لوں گا
مُجھے خبر ہے کہ تُو بھی مُجھ سے کرے محبّت بلا کی آخر
پڑی ضرورت تو جانِ جاناں مَیں نام تیرا پکار لوں گا
یہ لوگ سارے جہاں پہ جا کر پکارتے ہیں خدا کو اپنے
کہ مَیں بھی اپنا نصیب جا کر اُسی کے در پر سنوار لوں گا

0
8
تنہائی کا خوف ڈرانے لگتا ہے
جب وہ مُجھ سے ہاتھ چُھڑانے لگتا ہے
کالی راتیں تیز ہوائیں لاتی ہیں
جب بھی کوئی دیپ جلانے لگتا ہے
لگتا ہے یہ آنکھ کا دریا سُوکھے گا
اشکوں میں یہ ریت بہانے لگتا ہے

0
13
یہ قیامت کبھی بھی ڈھانا نہیں
مُجھ کو اے دوست بُھول جانا نہیں
رشتے کمزور پڑ گئے ہیں بہت
پہلے جیسا یہ اب زمانہ نہیں
مُجھ سے مِلنے نہیں وہ آیا آج
یاد اس کو کوئی بہانہ نہیں

0
9
مجھے وہ نئی اک ادا دے گیا
عجب زندگی کا مزا دے گیا
سفارت اجالوں کی سونپی مجھے
چراغوں کو میرا پتہ دے گیا
کبھی مثلِ خُوشبو معطر کیا
کبھی سرد رُت کی ہوا دے گیا

0
9
وہ خوش مزاج مری زندگی کا حِصّہ ہے
اسی لئے تو مرے آس پاس رہتا ہے
تمام شہر کی آنکھوں میں تم ہی رہتے ہو
خدا نے تم کو غضب کا جمال بخشا ہے
مَیں جانتا ہوں کے وہ شخص کتنا اچھا ہے
تو بات بات پہ جس کی مثال دیتا ہے

0
10
دوستوں کی دوستی
میں چُھپی ہے زندگی
کُچھ نظر آتا نہیں
اس قدر ہے تیرگی
دِل کے کونے میں کہیں
رہ گئی ہے ان کہی

0
14
آج بچھڑے جو ملنے والے ہیں
پھول شاخوں پہ کھلنے والے ہیں
جن کی تصویر میں بناتا ہوں
وہ تو چہرہ بدلنے والے ہیں
ظلمتِ شب ہماری بستی کے
آخری دیپ بُجھنے والے ہیں

0
9
ٹُوٹ کر اس طرح سے پیار نہ کر
جانے والے کا انتظار نہ کر
پُھول جیسا ہے دوست یہ جیون
زندگانی کو مِثلِ خار نہ کر
لوٹ بھی آ وفا کے رستے پر
موسمِ گُل کو بے قرار نہ کر

0
9
کِس کو کھونا ہے کس کو پانا ہے
زندگی بھی عجب فسانہ ہے
کون کر پائے گا مُجھے تسخیر
کِس نے دل میں اترتے جانا ہے
اب تو ہر پل ہی زخم سہنے ہیں
اب تو ہرپل ہی مُسکرانا ہے

0
11
ہم نے یہ بات آزمائی ہے
بے وفائی تو بے وفائی ہے
جھوٹ سچ کا گماں نہیں ہوتا
اس کی باتوں میں کیا صفائی ہے
دِل دھڑکنا ہی جیسے بّھول گیا
اُس نے ایسی خبر سنائی ہے

0
11
چاند سُورج اور ستارے ہاتھ میں
خواب میں دیکھے تمھارے ہاتھ میں
آنکھ رکھ آیا تری دہلیز پر
اور اُٹھا لایا نظارے ہاتھ میں
مَیں نے دیکھا ہے سمندر آنکھ میں
آنکھ سے بہتے ہیں دھارے ہاتھ میں

0
11
اکثر اپنا پیار جتانے آتا ہے
مَیں رُوٹھوں تو یار منانے آتا ہے
جو منزل اور رستے سے بے بہرہ ہو
وہ بھی مجھ کو راہ دکھانے آتا ہے
شہزادے کے بھیس میں کوئی راتوں کو
شہزادی کے خواب چُرانے آتا ہے

0
6
زندہ درد کہانی رکھنا
اپنی آنکھ میں پانی رکھنا
رکھنا مشکل آسانی میں
مشکل میں آسانی رکھنا
مُجھ سے نفرت کرنے والے
میرا پیار نِشانی رکھنا

0
21
میری سانسیں، اسی کی سانسیں ہیں
جس کی باتیں حسین باتیں ہیں
شور کرتی تھیں اس کے آنے پر
اب یہ خاموش سی جو راتیں ہیں
ڈور سانسوں کی اس کے ہاتھ میں ہے
جس کی بخشی ہوئی یہ سانسیں ہیں

0
19
جِن سے ہوتے ہیں رشتے سانسوں کے
سانپ ڈستے ہیں اُن کی باتوں کے
رزق تقسیم کرنے والے دیکھ
لوگ مارے ہوئے ہیں فاقوں کے
خامشی جس نے اوڑھ رکھی تھی
اب تو چرچے ہیں اس کی باتوں کے

0
25
بعد مدت کے مُسکراتے ہیں
درد و غم سے نِکل کے آتے ہیں
اِس سے پہلے کہ دیر ہو جائے
حالِ دل ہم اّسے سُناتے ہیں
آنکھ جب خواب دیکھتی ہے ترا
دل میں جگنو سے جھلملاتے ہیں

0
13
ہجر سے اس لئے نہیں ڈرتے
دید کی آرزو نہیں کرتے
اس قدر دوریاں نہیں اچھی
تم مرے ساتھ کیوں نہیں چلتے
لوگ ایسے بھی ہم نے دیکھے ہیں
جو کہ مر کر کبھی نہیں مرتے

0
9
کوئی اتنا برا نہیں ہوتا
وقت بس ایک سا نہیں ہوتا
پھر بھی اک راستہ تو ہوتا ہے
جب کوئی راستہ نہیں ہوتا
حادثوں کے سبب پہ غور کرو
بے سبب حادثہ نہیں ہوتا

0
9
اُلفتوں کے درمیاں
نفرتوں کے درمیاں
رو رہی ہیں خواہشیں
حسرتوں کے درمیاں
کُچھ مُسافِر ہیں پڑے
راستوں کے درمیاں

0
15
تُم کو دل میں ہے اتارا عمر بھر
ساتھ چاہوں گا تمہارا عمر بھر
اے خُدا مَیں اس کے آدھے پیار میں
اب کروں کیسے گزارا عمر بھر
وہ بہے دریا کے پانی کی طرح
مَیں رہوں اُس کا کِنارا عمر بھر

0
29
پیش ہر اک گام دلدل ہے مجھے
کیا بتاؤں کیسی مشِکل ہے مجھے
کیا جئیں گے فاقہ کش افلاس میں
بس یہی اک سوچ ہر پل ہے مجھے
ڈھونڈ لاؤں گا عِلاج تیرگی
عظمتِ انسان افضل ہے مجھے

0
26
خامشی بھی سُنائی دیتی ہے
جب وہ صُورت دِکھائی دیتی ہے
زندگی بھی تو اک قفس میں ہے
موت آ کر رہائی دیتی ہے
چاک پر مَیں دیے بناتا ہوں
روشنی رہنمائی دیتی ہے

0
23
مَیں قدموں میں پھیلا ہوں
تیرے گھر کا رستہ ہوں
ہے برہا کی دُھوپ کڑی
مَیں چھایا کو ترسا ہوں
خوف ہے تیز ہواؤں کا
میں اِک ٹوٹا پتہ ہوں

0
14
بات کرتے ہیں جو چراغوں پر
رشک آتا ہے ان کی باتوں پر
بھوک سے سامنا ہوا ہے کیا
تم بھی لکھنے لگے ہو فاقوں پر
کتنی چاہت سے اُس نے میرا نام
لِکھ لیا ہے حسین ہاتھوں پر

0
26
تُم بھی مِلتے ہو اجنبی کی طرح
یعنی تُم بھی ہو زندگی کی طرح
تیرگی ختم ہو گئی ساری
تُم نظر آئے روشنی کی طرح
میرے نغموں میں جان تم سے ہے
میرے ہونٹوں پہ ہو ہنسی کی طرح

0
26
بُجھتی آنکھوں کو خواب دیتی ہیں
مُجھ کو شامیں عذاب دیتی ہیں
پڑھنے والے کو بھانپ کر آنکھیں
راز اپنے جناب دیتی ہیں
جب مرا دل سوال کرتا ہے
اس کی آنکھیں جواب دیتی ہیں

0
17
جب نِکالے گئے کہانی سے
اشک بہنے لگے روانی سے
ایک ہی بوند پیاس ہو جس کی
کیا غرض اس کو بہتے پانی سے
تیری محفل میں روشنی ہے مگر
رنگ تھا دوستی پرانی سے

0
17
کب کسی کو مِلی بے وفا سے وفا
پھر بھی اچھی لگی بے وفا کی ادا
دل میں الفت کا جو بیج بویا گیا
دیکھ ساون میں وہ پُھول بن کر کِھلا
روشنی سے اسے بھی بڑا پیار ہے
اِس لئے رکھ دیا ہے جلا کر دیا

0
15
اپنی آنکھوں کے وار کرتی ہے
تیرگی بے قرار کرتی ہے
سانس کا تجربہ بتاتا ہے
موت حملے ہزار کرتی ہے
زندگی عشق بھی نشہ ہے کیا
کیوں خطا بار بار کرتی ہے

0
15
دِل سے تمہاری یاد کو مِٹنے نہیں دیا
ہم نے کسی بھی زخم کو بھرنے نہیں دیا
چھوڑا نہیں ہے ضبط کا دامن ابھی تلک
آنکھوں سے ایک اشک بھی گِرنے نہیں دیا
ماں کی دعائیں ساتھ ہمیشہ رہیں مرے
مجھ کو کبھی زمین پہ گرنے نہیں دیا

0
17
خُود سے مجھ کو گِلہ نہیں کوئی
گرچہ تُجھ سا مِلا نہیں کوئی
لاکھ کوشش کے باوجود میاں
زخمِ دِل ہی سِلا نہیں کوئی
یار اِس مطلبی زمانے میں
چاہتوں کا صِلہ نہیں کوئی

0
14
سِتارے بات کرتے ہیں
تو سارے بات کرتے ہیں
مَیں جب خاموش ہوتا ہوں
خسارے بات کرتے ہیں
اِشاروں کی زباں سمجھو
اِشارے بات کرتے ہیں

0
20
عہد و پیماں بدلتے دیکھے ہیں
کتنے اِنساں بدلتے دیکھے ہیں
ہر طرف ہو گئی زمیں بنجر
جب سے دہقاں بدلتے دیکھے ہیں
دوستو زندگی کے صدموں سے
ہم نے ایماں بدلتے دیکھے ہیں

0
12
دل میں اک دلدار ہے رکھا
ہر اک سانس میں پیار ہے رکھا
اک جانب ہے پیار کی دولت
اک جانب سنسار ہے رکھا
منزل بھی دشوار ہے اپنی
رستہ بھی دشوار ہے رکھا

0
20
خواب آنکھوں میں جو پروتے ہیں
منزلوں کے قریب ہوتے ہیں
بات نفرت کی جو نہیں کرتے
امن کے وہ نقیب ہوتے ہیں
عُمر گزری ہے دشت میں اُن کی
چین کی نیند اب جو سوتے ہیں

0
13
ہجر کے ساتھ ہاتھ ہو جائے
رنج و غم سے نجات ہو جائے
روشنی بانٹ دو زمانے میں
اس سے پہلے کہ رات ہو جائے
پہلے دیدار ہو مجھے تیرا
پھر فنا میری ذات ہو جائے

0
19
مُسکرانے کی دیر ہے باقی
جھلملانے کی دیر ہے باقی
میں نے رکھ دی ہیں طاق پر آنکھیں
اُس کے آنے کی دیر ہے باقی
خاک ہو جائے گی تری شہرت
سچ بتانے کی دیر ہے باقی

0
17
دردِ ہِجراں تُجھے چُھپاتے ہوئے
اشک بہتے ہیں مُسکراتے ہوئے
ٹُوٹ سکتی ہے ڈور سانسوں کی
سانس کے اِس طرح سے آتے ہوئے
اپنے حِصّے کا تُم جلاؤ دِیا
کچھ نہ سوچو دِیا جلاتے ہوئے

0
20
آندھیوں میں دئے جلائیں گے
دشت میں راستہ بنائیں گے
بے نشاں منزلوں کے راہی ہیں
کیا مُسافر یہ تھک نہ جائیں گے ؟
ہم کو دشتِ سخن میں رہنے دو
پیار کے پُھول ہم کھلائیں گے

0
20
اک شخص کر گیا ہے سپنے مرے اُداس
کُوچے مرے اُداس ہیں رستے مرے اُداس
ماتم منا رہا ہوں کسی کی جدائی کا
آہیں مری اُداس ہیں نوحے مرے اُداس
کس نے زہر یہ گھولا ہے میری مِٹھاس میں
لہجہ مرا اُداس ہے قِصّے مرے اُداس

0
21
گاؤں سے جب مَیں شہر آیا تھا
خواب آنکھوں میں باندھ لایا تھا
تُونے ٹھکرا دیا محبت کو
دل ہتھیلی پہ دھر کے لایا تھا
آبلے پڑ گئے تھے پاؤں میں
یاد ہے کتنا چل کے آیا تھا

0
27
مُجھ سے کہتا ہے غم کا مارا ہوا
میں بھی تیری طرح ہوں ہارا ہوا
ہے خبر یہ جہان کچھ بھی نہیں
مَیں ہوں اِک خواب میں اُتارا ہوا
تم ہی ٹھہرو گے انتخاب مرا
عشق مُجھ کو اگر دوبارہ ہوا

0
15
جب بھی درد کہانی لِکھنا
بوجھ سے چُور جوانی لکِھنا
اُس کے چہرے کی شادابی
میری آنکھ کا پانی لکِھنا
جب بھی لکِھنا مُجھ کو ساجن
بس اپنی دیوانی لکِھنا

0
13
نقش سارے مِٹا کے آیا ہوں
اُس کی یادیں بُھلا کے آیا ہوں
اِک سمندر ہے آنکھ میں باقی
ایک دریا بہا کے آیا ہوں
عین ممکن ہے وقت کروٹ لے
ایک دنیا جگا کے آیا ہوں

0
12
کیا خوشنما ہیں آج نظارے زمین پر
اُترے ہیں آسمان سے تارے زمین پر
خوشبو، ہوائیں، پھول یہ کُہسار اے خدا
تیرے ظُہور کے ہیں اِشارے زمین پر
آنکھوں میں وحشتوں کے شرارے لئے ہوئے
دیکھے ہیں ہم نے درد کے مارے زمین پر

0
14
یوں تو چھوٹی سی زندگانی ہے
رنج و غم سے بھری کہانی ہے
اِس میں کردار ہیں بہت یارو
پل دو پل کی مگر جوانی ہے
آنکھ سے پوچھتا ہے دل میرا
تیرے کُوزے میں کتنا پانی ہے

0
6
سب سے اچھا تیرا نام
تیرے نام پہ رکھا نام
میں نے سیکھے حرف بہت
لِکھ پایا بس تیرا نام
عشق میں ہم بدنام ہوئے
آنکھ میں ابھرا تیرا نام

0
11
دِل کی دُنیا اُداس ہو گئی ہے
کیا کوئی بات خاص ہو گئی ہے
جانے کِس گُل بدن کی خوشبو ہے
جو ہمارا لباس ہو گئی ہے
کِتنی انمول آنکھ ہے میری
جب سے مردم شناس ہو گئی ہے

0
15
ہو نہیں سکتا ستارا ایک سا
وقت کس نے کب گزارا ایک سا
چاہتوں میں شِدّتیں بھی ایک سی
چاہتوں میں ہے خسارا ایک سا
دردِ دنیا کے لئے روتے ہو تّم
دل ہے میرا اور تمہارا ایک سا

0
13
اُلجھا ہوا ہوں مَیں بھی خیالوں کے درمیاں
آہوں کے درمیاں کبھی نالوں کے درمیاں
آنکھوں میں خواب رکھ کے یہ سوچے ہیں بیٹیاں
چاندی چمکنے لگ گئی بالوں کے درمیاں
پیچھے پلٹ کے دیکھا تو حیران رہ گیا
کتنا بدل گیا ہوں میں سالوں کی درمیاں

0
14
غم کے مارے جو مّسکرائے ہیں
تیری چاہت نے گُل کِھلائے ہیں
جو خوشی بھی مِلی ادھوری تھی
ہم نے ایسے نصیب پائے ہیں
تم زمانے سے ڈر گئے صاحب
ہم نے اپنوں سے زخم کھائے ہیں

0
15
مجھ کو دیکھنے والی آنکھیں
چاہت سے ہیں خالی آنکھیں
اِک دِن پتھر ہو جائیں گی
رستہ دیکھنے والی آنکھیں
اّس کے ہونٹوں پر جو تِل ہے
کرتی ہیں رکھوالی آنکھیں

0
9
زرد رُتوں میں پُھول کِھلانے آیا ہوں
دھرتی کو گلزار بنانے آیا ہوں
اپنے حِصّے کا کرنا ہے کام مجھے
مَیں دنیا میں دیپ جلانے آیا ہوں
مَیں آنکھوں میں اشکوں کا سیلاب لئے
اپنے دل کی پیاس بُجھانے آیا ہوں

0
12
تُو نہ آیا مُجھے منانے کو
کیا مَیں سمجھوں ترے بہانے کو
دِل جُدائی نے چاٹ ڈالا ہے
لوگ کہتے ہیں مُسکرانے کو
وار تیرا خطا نہیں ہوتا
جانتا ہوں ترے نشانے کو

0
8
دِل فِدا ہو گیا نَظاروں پر
حُسن اُترا ہے کیا بہاروں پر
ہم مُسافر ہیں ساحلوں کے یہاں
ہم کو ڈھونڈا کرو کِناروں پر
اُس بلندی پہ آ گئے ہیں ہم
دسترس ہم کو ہے ستاروں پر

0
15
آنکھ میں اِنتظار دیکھا ہے
شخص اک بے قرار دیکھا ہے
میری خوشیوں میں میرے ساتھ رہا
غم میں جو اشک بار دیکھا ہے
اُس کی آنکھوں میں بس گیا ہے تُو
جس نے بھی تیرا پیار دیکھا ہے

0
7
پھیلا تھا جو سُخن کے سوال و جواب میں
وہ شخص کُھل رہا ہے ہماری کِتاب میں
بے رنگ موسموں کو بھی کردے گی مُشکبار
خُوشبو جو پل رہی ہے مہکتے گلاب میں
موجوں نے جب سے سحر زدہ کر دیا مُجھے
تب سے کوئی پکار رہا ہے چناب میں

0
9
وفا کے عِوض بے وفائی نہ دینا
بس اِک اِلتجا ہے جُدائی نہ دینا
مُحبّت ہے تجھ سے کہ دیوانگی ہے
سِوا تیرے کچھ بھی دِکھائی نہ دینا
خُدا تُجھ سے اب میں یہی مانگتا ہوں
کہ دُشمن کو مجھ تک رسائی نہ دینا

0
5
جب بھی رب سے مانگے حرف
لوحِ دل پہ چمکے حرف
میں نے آنکھ میں رکھے خواب
اور لبوں پر رکھے حرف
پیار کا بھیگا موسم اور
بھیگیں یادیں بھیگے حرف

0
10
غزل
میری یادیں اُجالتا ہے کوئی
اب بھی مُجھ کو پُکارتا ہے کوئی
میری سوچوں پہ اُس کا پہرہ ہے
شعر میرے نِکھارتا ہے کوئی
جیسے جلتے دئے منڈیروں پر

0
10
تجھ سی آنکھیں کہیں نہیں ملتیں
تجھ سا چہرہ کہیں نہیں ملتا

15
بھُول جاتا ہوں باقی سب باتیں
چاند چہرہ بُھلا نہیں پاتا

13
اترتے شعر ہیں مجھ پر جو اک تواتر سے
بڑا ہے موزوں دسمبر سخن وری کے لئے

0
23
آپ اپنی مِثال ہیں آنکھیں
اور مُسکان بھی مثالی ہے

0
17
درد کے قصے سُناتی ہے ہوا
اُس کو چُھو کر جب بھی آتی ہے ہوا
رقص کرتے ہیں اندھیرے چار سُو
جب دیا کوئی بُجھاتی ہے ہوا
مَیں نے دیکھا ہے یہ منظر دوستو
پانیوں پر جھلملاتی ہے ہوا

0
23
جانے وہ کون ہے کہاں ہے وہ
جِس کو آنکھیں تلاش کرتی ہیں

0
20
پُھول ہے یا خار ہے
زندگی سے پیار ہے
جا رہا ہوں جِس طرف
راستہ دُشوار ہے
تِیر اُس کی آنکھ کا
اِس جِگر کے پار ہے

0
17
اُس کی تعریف جب بھی کرتا ہوں
بات آنکھوں پہ ختم ہوتی ہے

0
14
تُجھ سا کوئی نہیں زمانے میں
تُجھ سا چہرہ کہیں نہیں مِلتا

0
24
اُس کے چہرے کی دیکھ کر رنگت
پُھول شاخوں پہ مُسکراتے ہیں

0
13
کچھ بھی باقی نہیں رہا مانی
باقی دِکھتا ہے جو نہیں باقی

0
21
شِکستہ دِل ہیں فضا ہے بوجھل
گُزر جا تیزی سے اے دِسمبر

0
31
اِس سے پہلے کہ دیر ہو جائے
دیر تک بات چِیت کرتے ہیں

0
17
حادثے کیا روک پائیں گے اسے
عزم جس کا ہے چٹانوں کی طرح

0
17
جانے کس کرب میں نہیں سوتے
رات آنکھوں میں کاٹنے والے

0
11
جب مرا خواب ٹوٹ جاتا ہے
چوٹ لہجے پہ آ کے لگتی ہے

0
21
پیار سے اِس طرح نہ دیکھا کر
شعر سارے میَں بُھول جاتا ہوں

0
13
جانے والے کو میں نہ روک سکا
آنے والا بھی خود چلا آیا

0
23
وقت نے جینے کا فن سِکھلا دیا
یہ بھی شامِل ہے مرے استادوں میں

0
23
میرے اندر کڑی عدالت ہے
دیکھئے فیصلہ کیا آتا ہے

0
22
اُس کی ہر اِک ادا بھلی ہے مگر
ہم نے ساجن کی بے رخی لے لی
بُجھ نہ پائیں یوں ٹِمٹماتے رہیں
ہم نے جُگنو سے روشنی لے لی

23
ایک رستہ کُھلا ہی ہوتا ہے
جب کوئی راستہ نہیں ہوتا
حادثے راستہ بناتے ہیں
راہ میں حادثہ نہیں ہوتا

0
14
دِل کو بس ایک ہی شکایت ہے
کھول دیتی ہیں بھید سب آنکھیں

0
12
گو مَیں آیا ہوں دیر سے مانی
اپنا رستہ بنا کے آیا ہوں

0
16
رب نے اُس کو اُتارا یوں مُجھ پر
جِس طرح آخری صحیفہ ہو

16
جیسے دُھواں چراغ کو جاتا ہے چھوڑ کر
ایسے ترے حِصار سے مَیں بھی نِکل گیا

18
ہر طرف سسکیاں ہیں، ماتم ہے
پھر بھی مسرور زندگی ہے تری

1
27
جیسے دھواں بکھیر دے کوئی چراغ کا
ایسے ہوا ہوں گم کہیں دنیا کی بھیڑ میں

17
رات باقی تھی گھر سے نِکلے تھے
رات باقی ہے گھر نہیں پہنچے

18
ہرخُوشی مُسکرا کے آتی ہے
غم کبھی پُوچھ کر نہیں آتے

23
اُس کو دیکھوں کہ چاند کو دیکھوں
روشنی ایک سی ہے دونوں طرف

0
19
کھینچ قوسِ قزح مرے مالِک
پِھر زمیں پر بپھر گیا پانی

16
تُجھ سے مِل کر یہ پتہ چلتا ہے
لمحے صدیوں سے بڑے ہوتے ہیں

0
26
آسماں کو لگام دے مولا
بارشوں سے بچا زمین کے لوگ

0
1
38
آسماں کھول دے خُداوندا
رحم تیرا زمین پر برسے

33
زندگی جس کو پیار کرتی ہے
موت کے منہ سے کھینچ لاتی ہے

0
23
مُجھ کو مرکز میں میرے رہنے دو
اپنے محور میں گُھومنا ہے مُجھے

0
21
تُم بہو دریا کے پانی کی طرح
میَں رہوں اس کا کِنارا عمر بھر

0
20
تیرے لوگوں کی خیر ہو یارب
موت رقصاں ہے بارشوں کے ساتھ

0
33
درد و غم جب نڈھال کرتے ہیں
ماں کی تصویر دیکھ لیتا ہوں

0
24
سر پہ سایہ نہیں رہا کوئی
عُمر بھر دُھوپ کی مُسافت ہے

0
21
تُو نہیں تھا مرے مقدر میں
میرا تقدیر پر بھروسہ تھا

0
23
ہونٹ خاموش ہوتے ہیں لیکن
اس کی آنکھیں کلام کرتی ہیں

45
اُس نے آنکھیں جُھکا لیں ہیں اپنی
لوگ آنکھوں سے دل میں جھانکتے ہیں

33
ظرف دیتا ہے شخصیت کی خبر
لوگ سب ایک سے نہیں ہوتے

0
25
آسماں کی نظر میں سب کُچھ ہے
یہ زمیں کُچھ چُھپا نہیں سکتی

21
جِس کو چاہے نہ عُمر بھر کوئی
نامُکمّل شُمار ہوتا ہے

29
آپ سے گفتگو کریں کیسے
آپ کب دوسروں کو سنتے ہیں

29
دیر تک آسماں کو تکتا ہوں
ایک دِن تو جواب آئے گا

1
30
روشنی کی تلاش میں مانؔی
شہر کا شہر گھر سے نِکلا ہے

0
31
تُجھ سے مِل کر یہ پتہ چلتا ہے
عُمر لمحے کی بڑی ہوتی ہے

0
23
اِس سے پہلے کہ دیر ہو جائے
آؤ مِل کر دِیئے جلاتے ہیں

0
21
تمام شہر کی آنکھوں میں تم کھٹکتے ہو
تُمہیں خدا نے غضب کا جمال بخشا ہے

0
25
زندگی کا وہ لُطف کیا جانے
جس کو چاہے نہ عمر بھر کوئی

0
17
عِشق نے بخشا مُجھے اِتنا عروج
مَیں زمیں سے آسماں تک آ گیا

0
22
اشک جاری ہیں ایک مُدّت سے
بوجھ ہلکا نہ ہو سکا دِل کا

0
25
ڈھونڈ لاؤں گا علاجِِ تیرگی
عظمتِ اِنسان افضل ہے مجھے

0
26
جن کا چہرہ سوال ہوتا ہے
کام لیتے نہیں زباں سے وہ

0
23
ایک دن چھو کے اُس کو دیکھوں گا
موم ہے یا وہ کوئی پتھر ہے

0
39
مُشکل بڑا تھا ہجر کے رستوں کو ناپنا
دریا نے خُودکشی کی سمندر میں جا گِرا

0
27
دل چّھپاتا ہے حالتیں اپنی
بول دیتی ہیں سارا سچ آنکھیں

0
26
سب سے مضبوط رشتہ بھی مانی
توڑ دیتی ہے موت آخر میں

0
20
تمہارے خواب مجھے سوچنے نہیں دیتے
تمہارے خوابوں سے نکلوں تو پھر میں کچھ سوچوں

0
24
خواب آنکھوں کے ٹوٹ جائیں تو
زخم لہجے پہ گہرے آتے ہیں

0
23
اُس کے تیکھے نقوش اے مانی
اُس کو کرتے ہیں منفرد سب سے

0
27
جسم و جاں چاہتوں میں لپٹے ہیں
کھول دیتی ہیں بھید سب آنکھیں

0
20
چُھوٹ جاتی ہیں وقت کی نبضیں
جب وہ آنکھوں سے مُسکراتا ہے

0
27
جب بھی درد کہانی لِکھنا
بوجھ سے چُور جوانی لکِھنا
اُس کے چہرے کی شادابی
میری آنکھ کا پانی لکِھنا
جب بھی لکِھنا مُجھ کو ساجن
بس اپنی دیوانی لکِھنا

0
25
سال تو ایک جیسے ہوتے ہیں
بس حوادِث بدلتے رہتے ہیں

0
34
اِتنے حِصّے کِئے گئے میرے
میرے حِصّے میں مَیں نہیں آیا

0
45
خُود پہ ہے اعتبار کر لوں گا
غم کے دریا کو پار کر لوں گا
جتنا عرصہ ہے زندگانی کا
مَیں ترا اِنتظار کر لوں گا
تُم مُجھے روکنے تو آؤ گے
مَیں سفر اختیار کر لوں گا

0
29
میں لے کے آیا ہوں اک کہانی
کہانی زندہ رہے گی ہر دم
کہانی شہباز کی ہے یہ تو
کہ مثلِ پولوس چن لیا تھا
مسیح نے اس کو
مسیح میں پا کے نئی حیاتی

0
30
مبارک ہو یہ دِن تم کو
جو پھر ہے لوٹ کر آیا
محبت کا یہ دِن جس کو
مناتا ہے جہاں سارا
زمین و آسماں سارا
ہمیشہ یاد رکھنا تم

0
24
جنم دن کی مبارک ہو
مری جاناں مری جاناں
خوشی کا دن ہے پھر آیا
مبارک دل سے ہو تم کو
محبت سے بھرا یہ دن
دعا ہونٹوں پہ ہے میرے

0
32
یار مجھ کو گِلہ نہیں کوئی
زخمِ دل ہی ِسلا نہیں کوئی
سب سمندر کھنگال کر دیکھے
تجھ سا موتی مِلا نہیں کوئی
موسمِ گل چلا گیا آ کر
پھول لیکن کِھلا نہیں کوئی

0
30
سب سمندر کھنگال کر دیکھے
تُجھ سا موتی مِلا نہیں کوئی

0
41
مُشکل بڑا تھا ہجر کے رستوں کو ناپنا
دریا نے خُودکُشی کی سمندر میں جا گِرا

0
41
کِتنے پتھّر تراش ڈالے ہیں
ایک بُت کو نکالنے کے لئے

0
43
جِن کی آنکھوں کا خواب ٹُوٹا ہو
اُن کے لہجے کا مت بُرا مانو

0
63
کون آیا ہے آج ساحل پر
موج در موج رقص جاری ہے

0
82
تُم مجھے ڈھونڈنے تو نِکلو گے
مَیں سفر اختیار کر لوں گا

0
48
دِل فقط ایک بار ٹُوٹا تھا
اب تلک کِرچیاں ہیں راہوں میں

0
31
وہ مجھ کو جان سے پیارا ہے جاکے اس سے کہو
وہ کالی رات میں تارا ہے جاکے اس سے کہو

0
38
پہلے جیسا نہیں رہا مَیں بھی
وہ بھی پتھر نہیں رہا پتھر

0
47
میں سمندر سے لے کے آیا ہوں
وسعتیں، خامشی و گہرائی

0
61
آسماں چُپ ہے یہ زمیں بھی چُپ
شور کیسا ہے یہ خُدا جانے

0
134
ایک غم ہے جو مُجھ میں رہتا ہے
اِک خوشی ہے جو دستیاب نہیں

0
55
تیرےغم سے تو مَیں نہیں ٹُوٹا
اب ذرا آزما خوشی دے کر

0
61
ایک دریا ہے اُس کے رستے میں
وہ جو کہتا ہے مَیں سمندر ہوں

0
54
میرے رستے کا وہ ہی کانٹا تھا
پُھول جِس کے لئے مَیں لایا تھا

0
55
زندگی کو عزیز تر ہوں میَں
موت کو بس یہی شکایت ہے

39
زندگی چار دِن کا میلہ ہے
موت میلہ اُجاڑ دیتی ہے

0
72
ایک چہرہ گلاب جیسا ہے
سوہنی کے چناب جیسا ہے

0
82
کب کسی کو مِلی بے وفا سے وفا
پھر بھی اچھی لگی حُسن کی ہر ادا
موسمِ گُل میں جو بیج بویا گیا
دیکھ ساون میں وہ پُھول بن کر کِھلا
روشنی سے اسے بھی بڑا پیار ہے
اِس لئے رکھ دیا ہے جلا کر دیا

0
64
تنہائی کا خوف ڈرانے لگتا ہے
جب وہ مجھ سے ہاتھ چُھڑانے لگتا ہے

0
59
لہو برستا ہے جب بھی شکستہ حالوں پر
وہ آسمان کو تکتے ہیں مُسکراتے ہوئے

0
54
آنکھ سے پُوچھتا ہے دِل میرا
تیرے دریا میں کِتنا پانی ہے

0
53
لوٹ بھی آ وفا کے رستے پر
موسمِ گُل کو بے قرار نہ کر

0
51
مَیں ہنسوں بھی تو کس طرح مانی
میری بستی کے لوگ روتے ہیں

0
55
مَیں ہنسوں بھی تو کس طرح مانی
میری بستی کے لوگ روتے ہیں

0
59
مَیں تو پتّھر ہٹانے والا تھا
آپ نے ہاتھ باندھ رکھے ہیں

0
48
جو وبا سے بِکھر گئے مانی
خواب ترتیب دے رہا ہوں مَیں

0
143
غم سے کچلی ہوئی جوانی سے
اشک بہنے لگے روانی سے
ایک ہی بوند پیاس ہو جس کی
اس کو کیا غرض بہتے پانی سے
تیری محفل میں روشنی ہے مگر
رنگ تھا دوستی پرانی سے

0
68
جان لو گے تو رو پڑو گے مِیاں
عِشق میں ہم فقیر کیسے ہوئے ؟

0
81
دِل کی دُنیا اُداس ہو گئی ہے
یا مُحبّت اساس ہو گئی ہے
جانے کِس گُل بدن کی خوشبو ہے
جو ہمارا لباس ہو گئی ہے
کِتنی انمول ہے نظر میری
جب سے مردم شناس ہو گئی ہے

0
5
183
تیرے گھر کا رستہ ہوں
مَیں قدموں میں پھیلا ہوں
ہے برہا کی دُھوپ کڑی
مَیں چھایا کو ترسا ہوں
زرد رتوں میں آوارہ
میں اِک ٹوٹا پتہ ہوں

0
91
صُبحیں تازہ گلاب دیتی ہیں
اور شامیں عذاب دیتی ہیں
پڑھنے والے کو بھانپ کر آنکھیں
راز اپنے جناب دیتی ہیں
جب مرا دل سوال کرتا ہے
اس کی آنکھیں جواب دیتی ہیں

0
77
اُلجھا ہوا ہوں مَیں بھی خیالوں کے درمیاں
آہوں کے درمیاں کبھی نالوں کے درمیاں
آنکھوں میں خواب رکھ کے یہ پُوچھے ہیں بیٹیاں
چاندی اترتی ہے یہ کیوں بالوں کے درمیاں
پیچھے پلٹ کے دیکھا تو حیران رہ گیا
بِکھرا پڑا تھا میں کئی سالوں کی درمیاں

0
87
خواب آنکھوں میں جب اُگائے ہیں
تیری چاہت کے پھول آئے ہیں
دُکھ سے رشتہ پرانا ہے اپنا
غمِ ہجراں کے ہم پہ سائے ہیں
اُس کی دُنیا بھی ہوگئی ویران
اُس نے کیا غم گلے لگائے ہیں

0
79
تُو نہ آیا مُجھے منانے کو
کیا مَیں سمجھوں ترے بہانے کو
کرب لفظوں میں ڈھل نہیں سکتا
زخم ہی ہیں تُجھے دِکھانے کو
جو چُھپایا ہے تیری نظروں نے
مَیں نے دیکھا ہے اُس خزانے کو

0
83
آنکھ میں اِنتظار دیکھا ہے
جیسے دریا کے پار دیکھا ہے
میری خوشیوں میں میرے ساتھ رہا
غم میں جو اشک بار دیکھا ہے
تیری آنکھوں میں بس گیا وہ ہی
جس نے بھی تیرا پیار دیکھا ہے

0
107
پھیلا تھا جو سُخن کے سوال و جواب میں
وہ شخص کُھل رہا ہے ہماری کِتاب میں
بے رنگ موسموں کو بھی کر دے گی مُشکبار
خُوشبو جو پل رہی ہے مہکتے گلاب میں
موجوں نے جب سے سحر زدہ کر دیا مُجھے
تب سے کوئی پکار رہا ہے چناب میں

0
45
میری یادیں نِکھارتا ہے کوئی
اب بھی مُجھ کو پُکارتا ہے کوئی
اُس کی آنکھیں ہیں میرے چہرے پر
اپنے دِل میں اُتارتا ہے کوئی
روز آتا ہے میری سوچوں میں
شعر میرے نِکھارتا ہے کوئی

0
75
دِل فِدا ہو گیا نظاروں پر
حُسن اُترا ہے کیا بہاروں پر
ہم نئے راستوں پہ چلتے ہیں
آپ چلتے رہیں اِشاروں پر
کون ہے جو مُجھے پُکارتا ہے
خوف ہی خوف ہے چناروں پر

0
80
نیند جنگل میں پِھر رہی ہے کہیں
خواب حسرت سے تک رہے ہیں مُجھے

0