معزز صارفین،

یہاں پرکمنٹس میں آپ اس سائٹ کے بارے میں ہمیں اپنے مشوروں سے آگاہ کر سکتے ہیں۔ 



94
1083
جب بچھڑنا تھا دِل مِلے کیوں تھے
مجھ سے منسوب تم ہوئے کیوں تھے
موج آئی نہ جب لبِ ساحل
ریت پر نام پھر مٹے کیوں تھے
کس کا تھا انتظار کچھ تو کہو
دیر تک دھوپ میں کھڑے کیوں تھے

0
4
چاند چہرہ
جب تری دید ہی میسر ہے
پھر بھلا ہم کو اس سے کیا مطلب؟
چاند پورا ہے یا ادھورا ہے!

0
سب پُوچھتے ہیں نام کبھی کام نہ پُوچھا
آگاہ تھے آغاز سے انجام نہ پُوچھا
ہیں یاد مجھے آج بھی یارانِ قدح خوار
مَیں بھول گیا نام کبھی نام نہ پُوچھا
لا عِلم رہا رشتوں میں دولت کے عَمَل سے
شاعر ہوں اسی واسطے ہی دام نہ پُوچھا

0
1
ہماری بے بسی پر مسکرا لے جس کا جی چاہے
ہمارے صبر کو بھی آزما لے جس کا جی چاہے
اسے شکوہ ہے کیوں جس کو نہیں ہے ضبط کا یارا
وہاں اشکوں کے دریا بھی بہا لے جس کا جی چاہے
شکایت ان کو ہے ہم سے ،خدا کا نام لینے پر
گناہوں کے سمندر میں نہا لے جس کا جی چاہے

0
فاعِلاتن مفاعِلن فَعِلن
پاس آ کے گلے لگا کے ملے
وہ کبھی ہم سے مسکرا کے ملے
میں بھٹک جاؤں ڈھونڈتا اس کو
یوں وہ ہم سے نظر جھکا کے ملے
دل کی بنیاد وہ ہلا ڈالے

1
5
ہم کو منظور ہے رونا تو ملاقات نا کر
ہم سے ناراض ہی رہ ہم سے کوئی بات نا کر
تجھ سے منسوب مکمل تو مری ذات نا کر
بے سبب ہم پہ تو اپنی یہ عنایات نا کر
گرد اڑتی ہے مری ذات کے ہر پہلو سے
مرے نزدیک نا آ قصدِ مساوات نا کر

3
اس کو کھوجاکیے کعبے میں کلیساؤں میں
وہ تو مجھ میں ہی بسا تھا مجھے معلوم نہ تھا
مے پرستی کو ہی سببِ مستی جانا
تیری آنکھوں میں نشہ تھا مجھے معلوم نہ تھا
عشق ہے یہ کوئ کھیل تماشا تو نہیں
لا سے الٌا کی عطا تھا مجھے معلوم نہ تھا

1
14
قیادت کا عَلَم تھامے ہوئے ہوں
شہادت کا قلم تھامے ہوئے ہوں
عجب کیا ہاتھ میں ان کے ہیں پتھر
صداقت لا جَرَ م تھامے ہوئے ہوں
نہ جانے کیا دیا جائے گا فتویٰ
کلیسا میں حرَم تھامے ہوئے ہوں

1
10
اسی آرزو سے نظر سجا تری دید ہی مرا خواب ہو
مجھے آگہی کی جھلک دکھا مرا دل بھی وقفِ عذاب ہو
تری تلاش کا سفر رہے یونہی روشنی کا گذر رہے
مری روح سے مری آنکھ تک یونہی دل کشی کا سراب ہو
ترا التفاتِ کرم بجا ، تری اک نظر بھی کمال ہے
جو ترے بغیر گذر گۓ کبھی ان دنوں کا حساب ہو

1
8
وہ کہاں ہے مجھے پتہ ہی نہیں
ایسے لگتا ہے وہ ملا ہی نہیں
جیسے دو اجنبی ملیں پل بھر
ایسے بچھڑے کہ اب گلہ ہی نہیں
وصل میں حادثے وہ گذرے ہیں
اب فراق کوئی حادثہ ہی نہیں

2
15
مرے نصیب کے کھاتے کو کیوں سیاہ کیا
یہاں میں تھا ہی نہیں میں نے کیا گناہ کیا
عمر گذر گئی بس دشمنی نبھاتے ہوئے
ملا تو کچھ بھی نہیں خود کو ہی تباہ کیا
مگن تھے لوگ یہاں کام میں مگر میں نے
کیا تو کچھ بھی نہیں عشق بے پناہ کیا

5
وفا کی باتیں وفا کے قصے کہو گے تم جو تو دل دکھے گا
جفا کی باتیں جفا کے قصے کہو گے تم جو تو دل جلے گا
تمہیں سے منسوب ہیں جفائیں تمہیں سے منسوب ہیں خطائیں
خطا کی باتیں خطا کے قصے کہو گے تم جو تو دل بجھے گا
مجھے اٹھایا جو تم نے در سے بھٹک بھٹک کے بھٹک گیا میں
عطا کی باتیں عطا کے قصے کہو گے تم جو تو دل ڈرے گا

0
2
19
فریبیوں کے بھنور سے نکل گئے ہوتے
جو ہاتھ آپ کا ہوتا سںبھل گیے ہو تے
شکوہِ بے حسی بے جان راستوں سے کیوں
حواس والو تم ہی بدل گئے ہوتے
مصیبتوں نے توازن بنارکھا ورنہ
کسی نشیب پے لازم پھسل گیے ہو تے

13
تُم غَلَط سمجھے وہاں پر مَیں نہ تھا
مجھ پہ غُصّہ ہے تمہارا بے وجہ
وہ جنہیں تم سے کدورت ہے صنم
میرا اُن لوگوں سے کیسا واسطہ
خبرِ بد چھوڑی رقیبوں نے کہیں
اور تُم نے پڑھ لی میری فاتحہ

0
12
توسے لگا کر پیت نبی جی
بسرے سر سنگیت نبی جی
ٹھمری بھیروں بھاوت ناہیں
گاؤں تو ہارے گیت نبی جی
چرنوں میں ہاروں تن من دھن
دو جگوا لوں جیت نبی جی

1
9
اڑتے پنچھی کو بس دیکھتا رہ گیا
کیا میں آزاد ہوں سوچتا رہ گیا
زلف و رخسار کا یوں ہوا میں اسیر
آپ کو دیکھ کر دیکھتا رہ گیاۓ
اب رہائی ملی تو کہاں جا ؤں گا
سوچ کر اپنے پر نوچتا رہ گیا

16
‏بعد از اجتناب ہیں اب بھی
میری آنکھوں میں خواب ہیں اب بھی
وہ کبھی تو کتاب کھولے گا
منتظر کچھ گلاب ہیں اب بھی
تو ہی مجبوریوں کو روتا تھا
ہم تو حاضر جناب ہیں اب بھی

2
127
گھر میرا جگمگایا کرے
تو یوں ہی روز آیا کرے
چار دن کی تو ہو چاندنی
پھر اندھیرا ڈرایا کرے
میں بلندی کو چھوتا رہوں
تہمتیں وہ لگایا کرے

11
تُو نے خود لکھی جو اپنی حمد وہ تیری لکھوں
ورنہ کیا اوقات میری حمدمیں تیری لکھوں
کر دیا آغاز تیرے نام سے جب کام کا
تیری رحمت سےبھرا ہر لحظہ صبح و شام کا
جو تری تعریف کامل ہے مکمل بھی ہے وہ
ذکر کوئی رہ نہ جائے اس قدر اکمل ہے وہ

1
202
اس سائٹ کو بنانے کے لئے درج ذیل #سافٹوئر اور #ٹیکنالوجی کا استعمال کیا گیا ہے:بیک انڈ پر  c# اور Net Core 3.1. کا استعمال کیا گیا ہے۔ کلائنٹ سائڈ پر JavaScript اور  JQuery  کا استعمال ہے - یوزر انٹرفیس اور سٹائلنگ کے لئے  Boostrap 4.5   کا استعمال کیا گیا ہے۔ اس سائٹ پر نہائت خوبصورت مہرنستعلیق ویب فانٹ کا استعمال کیا گیا ہے جس کے لئے ہم  مشہور خطاط نصر اللہ مہر صاحب اور  ان کے صاحبزادے ذیشان نصر صاحب کے نہایت شکر گزار ہیں۔سائٹ کا لوگو بھی ذیشان نصر صاحب کا ڈیزائن کردہ ہے۔ اس کے علاوہ اردو محفل کے اراکین کا بھی شکریہ جو کہ مفید مشوروں سے نوازتے ہیں۔اردو کیبورڈ کے لئے yauk  اور  اردو ایڈیٹر کیبورڈ سے استفادہ کیا گیا ہے۔ورژن 1 کا سورس کوڈ گٹ ہب پر موجود ہے۔ 

15
324