Circle Image

محمد ندیم

@Nadeemgujjar

اردو شاعری

زندگی رہ گزر ہے گزر جائیں گے
تم بھی مر جائے گے ہم بھی مر جائیں گے
ان کا شانہ نہیں ان کا انچل نہیں
چشم تر کیا یہ موتی بکھر جائیں گے
بند ہے یہ گلی اس پہ تیرہ شبی
ہم نوا یہ بتا ہم کدھر جائیں گے

0
38
اندیشہء زوال ہے دستِ ہنر کے ساتھ
جو آج اک کمال ہے اہلِ نظر کے ساتھ
الجھی ہوئی کہانی سنو گے سناؤں میں
اک دردِ لا دوا ہے دلِ بے خبر کے ساتھ
لمبی مسافتوں سے ہمیں خوف کچھ نہیں
قزاق اپنے ساتھ ہے اک ہمسفر کے ساتھ

0
41
رستے میں ہاتھ چھوڑ کے دنیا سے ڈر گیا
اک شخص میرے واسطے زندہ ہی مر گیا
جن شدتوں سے وہ مرے سر پر سوار تھا
وہ جلد باز دل سے بھی جلدی اتر گیا
مانگا تھا زندگی سے جو کچھ روز کے لیے
مرهم نما وہ شخص بھی جانے کدھر گیا

0
36
اُس شخص کی تعریف بھلا کیسے بیاں ہو
جس شخص کو دیکھیں تو گلابوں کا گماں ہو
میں کون سے لفظوں سے اُسے یار سراہوں
جو پاؤں سے سر تک کوئی خوشبو کا جہاں ہو
کچھ شعر مِری آنکھ پہ کھلتے ہی نہیں ہیں
آواز تو دو مِیر کے دیوان کہاں ہو

0
46
ترے انتظار کی ریت پر
کوئی لفظ میں نے لکھا نہ تھا
کوئی حرف میں نے کہا نہ تھا
کوئی خواب میں نے چُنا نہ تھا
اسی انتظار کی ریت پر
مری آرزوؤں گلاب تھے

0
38
تو قریب اتنا مجھے شام و سحر لگتا ہے
دل کی شاخوں پہ محبت کا ثمر لگتا ہے
دیکھی ان دیکھی بہاروں کا اثر لگتا ہے
اور کچھ خوشیوں کے چھن جانے کا ڈر لگتا ہے
تو ملا ہے تو کہوں کیسے ملا کچھ بھی نہیں
آتشِ عشق ہے ایسی کے بچا کچھ بھی نہیں

0
37
چلی ہوا ترے منہ سے جب انکشاف چلے
مرے بھرے ہوئے کیسٹ مرے خلاف چلے
گھنے درخت بھی کرتے ہیں اس کی آؤ بھگت
جو دھوپ چھاؤں میں لے کر ترا لحاف چلے
اڑے تو بادِ مخالف سے اختلاف رہا
چلے تو خود سے بھی ہم کر کے انحراف چلے

0
38
پھول کدھر جائے گا ٹوٹے گا بکھر جائے گا
خوشبو بن کے تری نس نس میں اتر جائے گا

0
39
زندگی تم سے بندگی تم سے
دل کے آنگن میں چاندنی تم سے
میرے سُر میری شاعری تم سے
میرے گیتوں میں نغمگی تم سے
آنکھ میں ہے تمہارا نُور بسا
دل میں رہتی ہے روشنی تم سے

0
37
یاد ہر ایک ہمیں وہ حسیں ساعت رہ گئی
آنکھوں کے در پہ سمندر کی علامت رہ گئی
سارے الفاظ مخالف میں تمہارے تھے مگر
جب ہوئے روبرو لہجوں میں محبت رہ گئی
بے اثر دستکیں فریاد صدائیں ہیں سبھی
غیر کے کھیل میں اپنوں میں رقابت رہ گئی

0
39
خمار عشق نے آنکھوں میں وہ حروف بھرے
کتاب کوئی ہو مضمون تیرا ہی ھوتا ہے !

0
35
بڑی ہے بات جو تم مان لیتے ہو
حسن والو ہماری کیوں جاں لیتے ہو

0
31
پھر اس کی یاد آئی بجھانے کے واسطے
ہمیں نے کیا تھا دل میں چراغاں ابھی ابھی

0
44
تری آنکھوں پہ غزل کہنا بہت مشکل ہے
تری آنکھوں پہ تو قربان جوانی ہوگی

0
36
نظر پڑی کِسی تصویر پے تو یاد آیا
بہت عزیز تھی اِک شخص کو ہنسی میری

0
45
بس ایک ہی دسـتکِ غیبی کے اِنتظار میں ہم
تمام عمر بدن سراۓ میں ٹھہرے ہیں

2
54
آج تو ایک کام کرتا جا
میرا قصہ تمام کرتا جا
زخم جتنے بھی ہیں تمہی نے دیے
مرہموں کو بھی نام کرتا جا
طنز و دشنام ہی سہی چاہے
کچھ تو ہم سے کلام کرتا جا

19
142
زِندگی ڈھیر تَقاضوں کا بَھرم رَکھتی ہَے
مَیں گزَارُوں نہ گزَارُوں یہ گزَر جائے گِی

0
51
نا تھی پرواہ اپنی ذرا بھی مجھے
کھینچ لائی تھی بچوں کی بھوک یہاں

0
39
ہاتھ چُوم نے کی جب کی اِلتجا میں نے
تو مُسکرا کر کہنے لگئے صِرف ہاتھ کیوں

0
40
جانا ہوگا مجھے اجازت دے
خودکشی راہیں دیکھتی ہوگی !
وقتِ رُخصت کفن ہٹا کے مجھے
دیکھ لینا تُمھیں خوشی ہوگی !

0
42
چلا گیا تو نہ آئے گا پھر بلانے سے
تم اس کو روک لو یارو کسی بہانے سے
یہ چارہ گر یہ مسیحا فریب دیتے ہیں
ملے گا کچھ بھی نہیں حالِ دل سنانےسے
یہ بات بات پہ سیکھا ہے جو خفا ہونا
تو مان جانا بھی سیکھو ذرا منانے سے

0
42
دل سے نکال دیجئے احساسِ آرزو
مر جائیے کسی کی تمنا نہ کیجیے

0
31
انہی کو دیتا ہے احساس سے لباسِ آگہی
قلم سے پیدا ہوتے ہیں جب برہنہ حروف

0
11
66
ہمیں مدت لگے گی بننے میں کچھ
جو ہیں وہ تو خدا بنے ہوئے ہیں

0
31
اور کیا عہدِ وفا ہوتے ہیں
لوگ ملتے ہیں جدا ہو تے ہیں
کب بچھڑ جائیں ھم راہِ ہی تو ہے
کب بدل جائے نظر ہی تو ہے
جان و دل جس پہ فدا ہو تے ہیں
بات نکلی بھی زمانے سے تھی

0
4
51
انسان تو کتنا بھی بہادر کیوں نا ہو
لیکن یہ محبت اسے رولا دیتی ہے

0
3
52
شاعری تو میں دل بہلانے کے لئیے کرتا ہوں ورنہ
دو الفظ کاغذ پر اتارنے سے محبوب کہاں ملتے ہیں

0
2
52
ٹھوکریں مارنے لگتا ہے لہو نس نس میں
کتنا دشوار ہے، تیرا مرا یکجا ہونا

0
35
لکھتا ہے وہی ہر بشر کی تقدیر
وَالـلّٰـہُ عَـلٰی کُـلِّ شَـیْـئٍ قَـدِیْــرٌ
جس کے تابع ہیں جنّات و انسان
فَـبِــأَيِّ آلَاء رَبِّــكُــمَــا تُــكَــذِّبَــانِ
ابــتــدا ہے وہـی اور وہـی انــتــہــاء
وَتُـعِـزُّ مـن تـشـاء وَتُـذِلُّ مـن تـشـاء

0
49
ایک مسُلہ ہے جس کا حل تلاش کرنا ہے
مجھکو تیرے ساتھ اپنا کل تلاش کرنا ہے

0
28
اُس کو سُن لوں تو سبھی درد سکوں لگتے ہیں
جانے کِس دھن سے وہ لفظوں کو ادا کرتا ہے

0
38
وہ جو تقدیر میں لکھے نہیں ہوتے
ان ہی کی آرزو کو عشق کہتے ہیں

0
19
کیا کریں ایسی خوشی کو جو بھکاری کر دے
ہم کو جاناں ترے بخشے ہوۓ غم اچھے ہیں

0
23
دل کے سب زخم قرینے سے سجا رکھے ہیں
جو مگر تجھ سے ملے سب سے چھپا رکھے ہیں
جو ہمیں دیکھ کے ہنستے ہیں انہیں کیا معلوم
ہم نے سو فکر دل و جاں کو لگا رکھے ہیں
کوئی روٹھے ہوئے ساتھی کو ذرا سمجھائے
سب گلے ہم نے محبت میں بھلا رکھے ہیں

0
37
دسمبر ہوش کر پاگل یہ تجھ کو کیا ہوا آخر
بنا برسے گزر جانا تری فطرت نہ تھی پہلے

0
29
خدا کا شکر مجھے عشق ہو گیا ورنہ
میں تجھ پہ خرچ نہ ہوتا تو رائیگاں جاتا

0
22
مِیاں آہل سُخَن کی دوستی بِھی
ہُوا کرتی ہے تَقریباً مُحبّت

0
19
وہ مسکرا کے دیکھ لیں میری طرف کبھی
بس اُن کی اک نگاہ کی قیمت ہے زندگی

0
18
چل اپنے جیسے گنہگار ڈھونڈ آتے ہیں
نہیں ہیں راس ہمیں رنگ صوفیوں والے
کوئی بلائے تو خط پھاڑ دینا،مت آنا
یہاں مزاج ہیں لوگوں کے کوفیوں والے

0
30
پوچھا محبتوں کے زمانے کدھر گئے
بولی وہ موسموں کی روانی میں گِھر گئے
پوچھا وابستگی سے تھے کچھ لوگ کیا ہوا
بولی گھٹائیں چھا گئیں سب اپنے گھر گئے
پوچھا کہ میرے بعد کوئی مجھ سا بھی ملا
بولی نہیں ملا ہمیں ہم ہر نگر گئے

0
29
تُمہاری دی ہوئی ہر چیز مُجھ کو پیاری ہے
تُمہارے ہجر میں بھی بن سنور کہ رہتی ہوں

0
11
محبت درد بکھرا سا
محبت لفظ نکھرا سا
محبت آنکھ کا پانی
محبت رات کی رانی
محبت بےتکی تہمت
محبت نور کی مورت

0
47
میرے حالات پہ مسکراہ تو صاحب
یہ دعا ہے تمہیں بھی عشق ہو جائے

0
28
وہ الم کشوں کا ملنا وہ نشاط غم کے سائے
کبھی رو پڑے کبھی زخم ندیم مسکرائے

0
30
دسمبر جا خدا حافظ بہت دکھ درد بانٹے ہیں
کوئی روٹھا کوئی بچھڑا کسی کو چھوڑ آئے ہیں

0
42
نام کو تمہارے اک ہے مقام دے رکھا
لوگ بات منوالیتے ہیں ذکر تیرا کر

0
22
ہر شام یہ کہتے ھو کہ کل شام ملیں گے
آتی نہیں وہ شام ہی جس شام ملیں گے
اچھا نہیں لگتا مجھے شاموں کا بدلنا
کل شام بھی کہتے تھے کہ کل شام ملیں گے
آتی ھے جو ملنے کی گھڑی کرتے بہانے
ڈرتے ھو ڈراتے ھو کہ الزام ملیں گے

0
50
میری آنکھوں میں نہ ڈھونڈا کرو آنسو میرے
میں نے سینے میں چھُپا رکھا ہے ہر غم اپنا

0
42
کیسے کیسے خواب دیکھے دربدر کیسے ہُوئے
کیا بتائیں روز و شب اپنے بَسر کیسے ہُوئے
نینْد کب آنکھوں میں آئی کب ہَوا ایسی چلی
سائباں کیسے اُڑے ویراں نگر کیسے ہُوئے
کیا کہیں وہ زُلفِ سرکش کِس طرح ہم پر کھُلی
ہم طرف دارِ ہوائے رہگُزر کیسے ہُوئے

0
27
بڑی ہی شدت سے آزماتے ہو صبر میرا
کبھی جو خود پے گزاری تو بکھرہ ہی جاو گے

0
15
خاموش سی آنکھوں سے جب بات ھوتی ہے
ایسے ہی محبت کی شروعات ھوتی ہے
تیرے ہی خیالوں میں کھوئے ہوئے رہتے
پتا نہیں کب دن کب ہی رات ھوتی ہے

0
9
کسی کو کیا بتاتی میں
کسی کو کیا سُناتی میں
بہت لمبی کہانی تھی
بہت غمگین افسانہ
بہت گہری محبت تھی
بہت کم ظرف لوگوں سے

0
28
اور جن کی زیادہ قدر کر لی جائے
وہ ہمیں گر ہوا ہی سمجھ لیتے ہیںً

0
16
لبوں کو پھول تو پھولوں کو لب کہا میں نے
بہت ہی پہلے جو کہنا تھا اب کہا میں نے
میں اس بہانے سے ہر بات دل کی کہتا ہوں
ہو شاعری میں بڑا نام کب کہا میں نے
میں سوچ سوچ کہ پاگل ہوا اسی ہی مشل
وہ رویا تھا میری جان جب کہا میں نے

0
14
بجھتا ہوا چراغ بھلا کیا دعا کرے
کہہ دو ہوا سے آج ذرا حوصلہ کرے
بندِ قبا جو کھول کے خوشبو صدا کرے
کیسے نہ چشمِ ناز کو یہ دل شفا کرے
جانے کہاں بچھڑ گئے تھے اپنی ذات سے
ہم کشت گان ہجر ہیں کوئی پتہ کرے

0
9
مشکل بڑی تھی دشتِ محبت کی سَیر بھی
اکڑے تھے اس سفر میں کئی بار پَیر بھی
تجھ سے کسی بھی ربط کی خواہش نہیں رہی
جب دوستانہ ختم تو پھر ختم بَیر بھی
ہر بار ایک رخ نیا آتا ہے سامنے
وہ جتنا آشنا لگا اتنا ہی غَیر بھی

0
15
نئے برس میں محبّت نئی کریں گے ہم
کسی کے ہجر کا یہ آخری مہینہ ہے

0
37
جس نے تنہائی کی بانہوں میں گزاری ہو حیات
تو اسے چھوڑ کے جانے سے ڈراتا کیا ہے
میری جیبوں میں محبت کے ہیں سکے لیکن
آج کے دور میں انکو سکوں سے آتا کیا

0
14
اب محبت کی بات مت کرنا اے دل
زخم پہلہ بھی ابھی سیلہ نا ہے

0
8
تیری آنکھوں کی کشش کیسےتجھے سمجھاؤں
ان چراغوں نے مری نیند اُڑا رکھی ہے

0
13
تُمھارے ساتھ تَخیُّل کے کورے کاغذ پر
میں دن بناتی رہی اور شام ہوتی رہی

0
15
خود کلامی میں راتیں گزر جائیں گی
ہفتہ گزرے گا عمریں گزر جائیں گی
ایک خط میں لکھوں گا بنامِ خدا
پہلی سطروں میں آہیں گزر جائیں گی
اس کی یادیں نہیں آئیں گی اِس طرف
گھر کے باہر سے راہیں گزر جائیں گی

0
20
سرخ سنہری پیلی کی ایجاد ہوئی
تجھ کو دیکھ کے چھتری کی ایجاد ہوئی
تجھ کو دریا پار سے دیکھا کرتے تھے
پھر بستی میں کشتی کی ایجاد ہوئی
میں نے تیرے ہاتھ پہ اپنا نام لکھا
اور دنیا میں تختی کی ایجاد ہوئی

0
15
یہ جان کر بھی کہ تُو اپنی دَسترس میں نہیں
وفا کا کھینچ دیا اِک حِصار بس یونہی

0
14
زندگی حقیقت میں بس میں اتنا ہی جانا
درد میں اکیلے ہیں خوشیوں میں زمانہ ہے

0
19
تمہیں یہ فخر تو حاصل ہے تمہیں چاہا گیا
ہمارے پاس یہ احساس بھی ادھورا ہے

0
12
کبھی جو دل تُو دھڑکا دے تو جا کے دل دھڑکتا ہے
کبھی مدھم کبھی ساکت کبھی درہم کبھی برہم
ترے ہی اسم سے جاناں مہکتی صبح ہے میری
کبھی روشن کبھی جھلمل کبھی چپ چپ کبھی پرنم

0
15
تیرے ہونٹوں پہ مسکان سجا دوں
تو ہنسے تو میں غم اپنا بھلا دوں
کوئی پوچھے مری جان ہے کس میں
مسکرا کے اسے نام بتا دوں

0
12
عشق ویرانے کی وہ راہ گزر ہے جس پر
دِل ٹھہر جاتا ہے اور عمر گزر جاتی ہے

0
10
ھم تیرے لگتے تو کچھ بھی نہیں مگر ہے یہ
نہ جانے بن ترے کیوں ہم اداس رہتے ہیں

0
15
یہ تھا ہی نہیں کہانی کا انجام اصل مِیں
کیا کیجئے کہ بِیچ مِیں کردار بِک گئے
یہ لازم ہے رکھیے اپنی نظر آستین پر
یہ سننے مِیں آ رہا ہے نمک خوار بِک گئے

0
15
میری کتابِ زیست تم اک بار تو پڑھو
گر چاہے پھینک دو کسی اخبار کی طرح
ـ

0
12
سارے غموں کی وفات ہو جاتی ہے
جب میری تم سے بات ہو جاتی ہے،

0
12
عادتیں ڈال کر اپنی توجہ کی
ایک دم جو بدلتے ہیں ستم کرتے

0
15
ہم بھی شوقین پینے کے ہیں
جب ہیں پیتے تو چائے پیتے

0
15
رشتہ رکھنا ہو تو اچھائی بیاں کرتے رہو
ختم کرنا ہو تو سچائی بیاں ہی کر دو

0
10
ساتھ اپنوں کا نبھانا تو کوئی بات نہیں
غیر کا بن کے دکھاؤ تو کوئی بات بنے
عمر کر دینا محبت میں عجب کیا صاحب
تم مجھے مر کے دکھاؤ تو کوئی بات بنے
تم جو کرتے ہو محبت پسِ دیوارِ انا
تم یہ دیوار گِراؤ ہی تو کوئی بات بنے

0
14
ہم جیت بھی سکتے تھے اس عشق کی بازی کو
وہ جیت کے خوش ہوگا یہ سوچ کے ہم ہارے

0
9
دل کی دھڑکن ہوا کرے کوئی
میرے دل میں بسا کرے کوئی
آتشِ عشق میں فنا ہو کر
رقص بسمل کیا کرے کوئی
ٹوٹ کر چاہے میرا ہو کے رہے
زندگی بھر وفا کرے کوئی

0
9
لاکھ بولا نہ قتلِ عام کرو
باز آئی نہ تم سنورنے سے

0
10
وہ پڑھ رہا ہے ان دنوں اوروں کی شاعری
میں اس کے انتخاب میں شامل نہیں رہی

0
18
کبھی تو ان کی بھی قدر کر کے ہی دیکھیں
جو آپ سے بنا مطلب کے پیار کرتے ہیں

0
12
تجھ کو پا کر بھی کچھ نہیں پایا
تیرے ہو کر بھی بے سہارے ہیں

0
11
روز کی طرح ہی آج بھی درد کو
ہم چھپانے لگے تھے مگر رو پڑے

0
9
پھر سے تیری کمی محسوس ہوئی شدت سے
آج پھر دل کو منانے میں بہت دیر لگی

0
15
اکھیاں وچ تو وس دا ایں
میں صدقے جاواں اکھیاں دے

0
19
تیرے لفظوں میں وہ تفصیل کہاں
اپنی آنکھوں سے کہو، بات کرے

0
18
تو جو بھی بول مگر ہمکلام رہ مُجھ سے
تُو جانتا ہے مجھے چپ سُنائی دیتی ہے

0
30
پیار کرنا دغا نہیں کرنا
دل کو دل سے جدا نہیں کرنا
غیرتِ ضبط کا تقاضا ہے
درد سہنا، گلِہ نہیں کرنا
لڑکیاں زود رنج ہوتی ہیں
کبھی ان کو خفا نہیں کرنا

0
17
وہ مری شامیں سہانی اور چُپ
ہائے اُس کی بدگمانی اور چُپ
طاقچوں میں رات کے رکھی رہیں
دو جلی شمعیں پرانی اور چُپ
اپنے اپنے ذائقے میں زہر ہیں
آنکھ کا یہ کھارا پانی اور چُپ

0
10
میں نے الفت کے فسانوں میں پڑھا ہے تمہیں
تم وہی ہو جو کہ دھڑکن کو بڑھا دیتے ہو

0
15
آخری دیپ ہے بھروسے کا
سرد لہجے بجھا نہ دیں اس کو

0
25
سلجھا کے اپنی زُلف کو وہ مطمئن ہیں یوں
جیسے کوئی جہاں میں پریشاں نا رہا

0
34
بدلنا ہے تو رندوں سے کہو اپنا چلن بدلیں
فقط ساقی بدل جانے سے میخانہ نہ بدلے گا

0
35
جسم سے روح نکلنے کا سماں ہو جیسے۔۔!
جان لیوا ھے ترا مجھ سے گریزاں ہونا۔!!

0
14
بہت ہے بھی سکوں گہرا بہت اجلی ہے خاموشی
بہت آباد لہجے میں، بہت سنسان ہے کوئی!!!!!!!

0
21
سکھائی ہیں یہ سب باتیں بھی محبت نے
میں نے بھی دھوکھے بہت عشق میں ہی کھائے ہیں

0
8
سکھائی ہیں یہ سب باتیں بھی محبت نے
میں نے بھی دھوکھے بہت عشق میں ہی کھائے ہیں

0
13
کوئی بانٹے مرے ساتھ مری تنہائی
ڈھونڈ کے لا دو مجھے زیست سے ہارا کوئی

0
10
کس قدر کارِ اذیت ہے ذرا سوچو تو
جس نے ملنا ہی نہیں اس کی تمنا کرنا

0
16
تو نے چپ سادھ لی موضوعِ محبت دے کر
گفتگو تجھ سے جو ہونی تھی زمانے سے ہوئی

0
15
تیرا وجود روجوں کے اعتکاف پر
میرا وجود تیرے ہی عین شین قاف

0
7
چاندنی رات کے خاموش ستاروں کی قسم
دل میں اب تیرے سوا کوئی بھی آباد نہیں

0
22
تیری صورت ہی مری آنکھ کا سرمایہ ہے
تیرے چہرے سے نگاہوں کو ہٹاؤں کیسے

0
10
ہم کو مارا گیا ہے نفرت سے
ہم پہ الزام تھا محبت کا

0
14
نہیں فرصت یقیں جانو ہمیں کچھ اور کرنے کی
تری باتیں تری یادیں بہت مصروف رکھتیں ہے

0
14
تم اگر چاہو تو تجدید محبت کے لیے
ایک ہلکا سے تبسم کی اک انگڑائی بہت

0
12
طبیب تھک چکا مگر یہ گھاؤ بھر نہیں رہا
شفا کی آس مر چکی مریض مر نہیں رہا

0
152
اشعار کے پردے میں جذبات بیاں کرنا
کیا خوب سلیقہ ہی ھے لفظوں کو زباں کرنا

0
25
ہاتھ ہاتھوں میں لے لیا اُس نے
جتنے گھاؤ تھے بھر گئے دل کے

0
13
پھر سے اک بار دل کو توڑ مرے
تجھ پہ کچھ اعتبار باقی ہے

0
13
بہت سا عرصہ ہوا نا آیا خبر بھی لینے
بڑا تھا آیا یہ زندگی بھر کا ساتھ دینے

0
13
کوئی امید ملاقات کی ہی دلا دو بس
پھر انتظار تو ہم ساری عمر کر لینگے

0
12
دل ہے یوستہ کسی شخص کے دل سے میرا
ہاتھ میں ہاتھ نہیں ہے کہ چھڑاتل جاؤ

0
12
عقل نے کردی دیر آنے میں
عشق لے بھی چکا تھا کام اپنا

0
12
چُھٹی کوئی مرے ساتھ مَنا گاؤں میں
کوئی خُوش بَخت سا اتوارمُکمل کر دے

0
15
پھر آج میرے درد نے مجھ کو منا لیا
کیسی عزیز سے کوئی کب تک خفا رہے

0
9
ہر ایک بات پہ اسکا جواب ہے لیکن
تمام بحث کا لب و لباب ہے لیکن
ہمارے پاس نہیں خواب کی حقیقت دوست
ہمارے پاس حقیقت کا خواب ہے لیکن
کوئی خلا ہے جو بھرتا نہیں کسی صورت
ہر ایک چیز ہمیں دستیاب ہے لیکن

0
10
جا چکے اب تو مری فکر کمانے والے
دن وہ بچپن کے نہیں لوٹ کے آنے والے
اب نہ وہ رنگ نہ خوشبو کے وہ میلے ٹھیلے
لے گئے ساتھ مرا وقت سجانے والے
لے گئے چاند بھی تارے بھی مری شامیں بھی
جو تھے جگنو مری راہوں میں بچھانے والے

0
19
میں ترے لب پہ ہوں دیرینہ شکایت کی طرح
یاد رکھنا ہے مجھے تو نے عداوت کی طرح
چاند نکلے تو مرا جسم مہک اُٹھتا ہے
رُوح میں اُٹھتی ہوئی تازہ محبت کی طرح
تیری خاطر تو کوئی جان بھی لے سکتا ہوں
میں نے چاہا ہے تجھے گاؤں کی عزت کی طرح

0
19
اب حالِ دل نہ پوچھ، کہ تابِ بیاں نہیں
اب مہرباں نہ ہو کہ ضرورت نہیں رہی

0
48
تجھ کو دیکھا تو سیر چشم ہوۓ
تجھ کو چاہا تو اور چاہ نہ کی

0
12
مجھ کو اس شخص کے افلاس پہ رحم آتا ہے
جس کو ہر چیز ملی صرف محبّت نہ ملی

0
11
ملاقاتیں مسلسل ہوں تو دلچسپی نہیں رہتی
یہ بے ترتیب یارانے بڑے ہی خوبصورت ہیں

0
24
بس اتنے ہی سے الفاظ کہنے ہیں تم سے
خیال رکھا کرو اپنا اچھے لگتے ہو

0
14
تو دل میں آئی تو ہر شے نکل گئی دل سے
تری طلب نے زمانے سے بے طلب رکھا

0
12
کوئی کردار تو تم لائو ہمارے جیسا
ہم اسی روز کہانی سے نکل جائیں گے

0
18
خاک میں گزرا ہوا کل نہیں ڈھونڈا کرتے
وہ جو پلکوں سے گرا پل، نہیں ڈھونڈا کرتے
پہلے کچھ رنگ لبوں کو بھی دیئے جاتے ہیں
یونہی آنکھوں میں تو کاجل نہیں ڈھونڈا کرتے
بیخودی چال میں شامل بھی تو کر لو پہلے
یوں تھکے پیروں میں پائل نہیں ڈھونڈا کرتے

0
17
تم کو ترسنے کا مطلبِ سمجھ میں آ جائے
ہمارے سامنے کچھ دیر بیٹھ کر دیکھو

0
8
ختم تھا ہم پہ محبت کا تماشا گویا
روح اور جسم کو ہر روز جدا کرتے تھے
زندگی ہم سے ترے ناز اٹھائے نہ گئے
سانس لینے کی فقط رسم ادا کرتے تھے

0
8
‏بھیجی تم نے ڈاک میں کتنی اداسیاں
چہرہ اُتر گیا مرا مرجھا گئے ہیں پھول

0
14
کہانی کار نے سب کو بتا دیئے کِردار
مجھے بس اتنا کہا ہے کہ تم نے مرنا ہے

0
15
ہٹا کر کفن مجھے بار بار تو دیکھیں گے
انھیں میرے مرنے کا اعتبار بھی نا ہو گا

0
12
صرف دھوکہ ہی دے سکا وہ
اُس کی اوقاتِ اتنی ہی تھی

0
6
جاگی آنکھوں کے خواب ہوتے ہیں
کچھ تعلق عذاب ہوتے ہیں
ٹوٹنے تک یہ کچھ نہیں ہوتے
ٹوٹ جائیں تو خواب ہوتے ہیں
کچھ مسائل کا مسئلہ یہ ہے
حل کرو تو خراب ہوتے ہیں

0
25
خزاں میں ہی شاخ سے گرتے پتوں نے اُداس
‏مجھے یہ درس دیا ہے زوال سب کو ہے

0
12
کچھ ہی قدموں کی دوری پر تھی
منزل کے بہت قریب تر تھی

0
9
کہاں رہی وہ محبت ہے آج کل
بہت سے لوگ ہوس کا شکار ہے

0
14
میرا گلا کرنا بنتا بھی نہیں ہے
کیونکہ وہ تو پہلے ہی بے وفا تھا

0
12
کسر کسی نے ہی نہیں چھوڑی مجھے مٹانے کی
خدا محافظ رہا میرا ہر زمانے میں ندیم

0
14
اپنی ہر بوند تری یاد کی لذت لیکر
بارشیں آگ لگانے کا ہنر لائی ہیں

0
19
ہم نکالیں گے اے سُن موجِ ہوا بل تیرا
اس کی زلفوں کے اگر بال پریشاں ہوں گے

0
15
ایک احساس ہی دل میں جگانے کے لیے
بات کرتے ھوئے مر جائیں تو کیسا ھوگا

0
31
ہر چیز ہی کہ مل جاتی ہے کہ ہی دعا سے
اک بار تمہیں مانگ کردیکھیں گے خداسے

0
13
شاعری شوق نہیں اور نہ ہی کار وبار
درد برداشت نہیں ہوتا تو لکھ دیتا ہوں

16
اب کسی کو کسی سے ڈر ہی نہیں
اب سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے

0
12
یہ خالی جیبیں فقیر حلیہ اداس آنکھیں
ہمیں کوئی جو گلے لگائے تو کیوں لگائے

0
20
دونوں ہی مرحلوں میں ہوں میں ہجر اور وصل
بیٹھا ہے میرے پاس وہ جانے کے بعد بھی

0
19
کیوں نا اے شخص تجھ کو دیکھوں لگا کے ہاتھ
تُو میرے وھم سے بڑھ کر بھی تو ھو سکتا ہے

0
18
نشانِ سجدہ سجا کر بہت غرور نہ کر
وہ نیتوں سے نتیجے نکال لیتا ہے

0
19
تم کو خبر ہوئی نہ زمانہ سمجھ سکا
ہم چپکے چپکے تم پے کئی بار مر گئے

0
12
جس کے لیے لِکھا اُس نے ہی نا پڑھا
پھر عالمِ کُل بھی پڑھ لے تو مُجھے کیا

0
20
گر زندگی میں ہوتی اک قتل کی اجازت
میں خود کو ہی بہت بے رحمی سے مار دیتا

0
12
مٹ جانے کا ارادہ تمہارے لئے تھا
تم خود ہی مٹا دو گے یہ سوچا ہی نا تھا

0
14
عشق کو بھی عشق ہو تو پھر میں دیکھو عشق کو
کیسے تڑپے کیسے روۓ عشق اپنے عشق میں

0
14
یہی بُہت ہے کہ دِل اُس کو ڈھونڈ لایا ہے
کِسی کے ساتھ سہی وہ نظر تو آیا ہے!

0
19
وہ آئیں گے ہی جِس بھی روز مِلنے
یقیناً فروری کی " تیس " ہوگی!

0
23
اور پھر چھوڑ گئے وہ جو کہا کرتے تھے
کون بدبخت تجھے چھوڑ کے جا سکتا ہے

0
18
قسم خدا کی کہ سب کُچھ مُجھے مُیسر ہے
بُہت ستاتی ہے لیکن تری کمی مُجھ کو!

0
20
خبر تھی کیا ہو جائے گی ہی محبّت تم سے
مجھے تو بس تیرا مسکرانا اچھا لگا تھا۔

0
19
ہم نے کب تم سے ملاقات کا وعدہ چاہا
دور رہ کر بھی تمہیں تم سے زیادہ چاہا"!

0
21
وہ رُوٹھا رہے مُجھ سے يہ منظُور ہے ليکن۔!
يارو اُسے سمجھاؤ ميرا شہر نہ چھوڑے

0
17
مجھے مطالب نہیں کوئی کس کے ساتھ کیسا
جو میرے ساتھ اچھا ہے وہ میرے لیے اچھا ہے

0
16
اور ہنستے ہوئے چہرے نے بھر رکھا ہمارا
وہ دیکھنے آیا تھا کہ کس حال میں ہے ہم

0
29
میں نے حلفاً اُسے بتانا ہی تھا
تُم میرے جسم و جاں میں بستے ہو

0
16
یہ تلخیوں سے بھرے ہوئے لوگ،
طنزیہ بھی نا کہے تو مر جائیں!

0
20
میں تیرا ذِکر کروں اپنے شعر میں یعنی
فقط دو مصرعوں میں یہ جہاں سمٹ جائے

0
19
ناراض ہمیشہ خوشیاں ہوتی ہیں
اتنے نخرے غم کے ہوتے ہی نہیں

0
14
اک بہانہ ہے مرے پاس ابھی جینے کا
ایک تصویر پڑی ہے تری میرے دل میں

0
15
دلیل تھی نا کوئی حوالہ تھا ان کے پاس
عجیب لوگ تھے بس اختلاف رکھتے ہی ہے

0
12
حقیقتِ سے پردہ اک دن اٹھ ہی جائےِ
سچِِ کو سامنے تو اب ہی رکھا جائےِ

0
22
یقیں گم ہو چکا ہم سے گماں محفوظ رکھا ہے
خیال و خواب سا رنگیں جہاں محفوظ رکھا ہے
ہوا مسمار سب لیکن جہاں تم گھر بناتے تھے
وہ دل کا ایک ٹکڑا جان جاں محفوظ رکھا ہے
شکستہ ہو چکے جل بجھ چکے تاریخ شاہد ہے
فضاؤں میں مگر اب تک دھواں محفوظ رکھا ہے

0
26
تلخی و حیات پی بھی لینے تو دیجئے
میسر ہو نا ہو پھر یہ شب پینے دیجئے
مےچل رہی تھی بادہ کش دست ساقی سے
پروانے کو  گلا ہے کیا پینے دیجئے
آئے یہاں سے اب خالی ہاتھ تو نا جائیں
تھوڑی سی میکدے ہمکو پینے دیجئے

2
57
تلخی و حیات پی بھی لینے تو دیجئے
میسر ہو نا ہو پھر یہ شب پینے دیجئے

24
اسے خوش کا   کوئی  بہانہ ڈھونڈتے  ہیں
مل  جائے  کوئی  ایسا  افسانہ  ڈھونڈتے ہیں

0
21
غم  نا   کر غم  بندے کو  جلا   دیتا  ہے
کون  ہے   جو  مجھکو   ہر  روز  پلا   دیتا  ہے
بھولنے کی  کوشش  میں رہتا  ہوں میں  ہر  لمحہ
کوئی ہے جو زخموں  پے نمک  ہی  لگا  دیتا  ہے
غم کے بادل  ہے سر پے اک سائے کی طرح
کوئی ہے جو بجھی  آگ  کو پھر سے  ہوا  دیتا  ہے

0
28
پہلے ملنے سے وہ بچھڑ گیا
وعدہ کرکے آیا تھا ملنے کا

0
26
آتی کہاں تھی شاعری سیکھا دی اس نے
عادت تھی کہاں عادت ہی بنا دی اس نے
پیار محبت کرنا بھی سیکھا دی اس نے
بھیجے شعلوں کو پھر سے ہوا دی اس نے
بھٹکا ہوا تو تھا میں پہلے  ہی  راہ  سے
دیکھتے دل کی بستی ہی جلا دی اس نے

0
34
آتی کہاں تھی شاعری سیکھا دی اس نے
عادت ہی کہاں تھی عادت بنا دی اس نے
پیار محبت کرنا بھی سیکھا دی اس نے
بھیجے شعلوں کو پھر سے ہوا دی اس نے
بھٹکا ہوا تو تھا پہلے ہی راہ سے میں
دیکھتے دل کی بستی ہی جلا دی اس نے

0
28
گر قلم کار کے کہنے میں نہیں آئے گا
تیرا کردار کہانی سے نکل جائے گا
یہ تماشا ہے ، تماشے میں یہی ہوتا ہے
تجھ سے بہتر جو نبھائے گا، جگہ پائے گا

0
54
جس سے کر لیتے ہیں دل کی بات
اور ہم پھر نہیں چھوڑتے

0
34
بات وہ بھی نہیں مانتا
اور ضد ہم نہیں چھوڑتے

0
33
تھے اور بھی چاہنے والے زمانے میں
مگر ہم نے تو دل تم سے لگایا تھا

0
19
اور نہیں کچھ بس اتنا ہی کافی ہیں
اس کی آنکھ کا نظارہ ہی کافی ہے
بات نا بھی ہو اس سے
ہو جائے دیدار اتنا ہی کافی ہے
دل تو کہتا ہے تیرا ساتھ عمر بھر کا
ہو اک پل کی ملاقات اتنا ہی کافی ہے

0
52
جی بر کے دیکھن سے جی بر گیا ہے میرا
کچھ وہ محبت میں ایسا دغا کر گیا ہے
جی تو چاہتا اس کا نام تلک نا لو
نام بھی لینا مجبوری اک بن گیا ہے
دکھ ہوتا ہے جب کوئی راہ میں چھوڑ کے جائے
پاس ہو کر منزل کے وہ راہ بدل جائے

0
39
اچھے کی امید مجھ سے نا کیجئے
برا ہوں میں برا ہی رہنے دیجئے

0
34
تیرے شہر میں ہم بھی آئے تھے بے وفا
ہر کسی سے وفا ملی بس اک تیرے سوا

0
34
کیا غضب کی کشش تھی تیری آنکھوں میں
اور چہرے کو زلفوں میں چھپا ہوں تھا

0
32
میرا غم تم نہیں سمجھو گے
آنکھوں نم تم نہیں سمجھو گے

0
25
یہ بھی شب غم گزر ہی جائے گی
لوٹ کر پھر کبھی نہ آئے گی

0
43
باتیں تو بہت سنی تھی عشق محبت کی
خود کو ہوا تو عشق پتہ چلا کہانی کا

0
38
بس وعدوں کا برہم رکھا ہے میں نے
ورنہ بے وفا تو کمال کے تھے

0
38
رہ بھی ہیں سنسان اورمنزل بھی ہے مشکل
مجھے جانا بھی ہے ضرور مگر تھکنا ہے بہت

0
27
کی ہوگی محبت اوروں نے بھی
ہم نے جو کی وہ کمال کی کی

41
آج پھر دل کی دھڑکنے شور کیا ہے
لگتا ہے جیسے کسی نے یاد کیا ہے

0
31
تو کچھ ایسے بسا ہے میرے دل میں
جیسے کوئی رہتا ہوں مکاں میں اپنے

0
30
رکھ دے پیمانوں کو جی بھر کے پلا ساقی
اِس قدر پلا کے میں مدہوش ہو جاؤ

0
42
گر فرصت ملے تمہیں چلے آؤ
چائے بنائی ہے میں نے آج

0
29
تیرے جانے سے مجھے کوئی فرق نہیں پڑتا
میں عادی ہو چکا ہوں تنہائی میں رہنے کا

0
37