Circle Image

رحیم اللّٰہ ظاؔہر

@Raheem1982

رازِ الفت کی گرہ کھولنے کب دیتا ہے
مجھ کو ہر بار صنم بولنے کب دیتا ہے
لب پہ کڑواہٹوں سے کان بھی دیوانے ہیں
سچ یہاں کانوں میں رس گھولنے کب دیتا ہے
خالی نظروں سے کتب دیکھ کے مشکل ہوگی
مذہبِ عشق سبق تولنے کب دیتا ہے

0
5
آؤ چلتے ہیں جہاں سے
آؤ چلتے ہیں یہاں سے
اس جنم کیوں ہم نے جینا
جس میں جنتا، بچہ چیخے
وہ خوشی باہم منائیں
مرتے دم جب لوگ چیخیں

0
12
ہم کو بچپن سے یہ عادت تھی دعا کرتے تھے
ان کو سینے سے لگایا جو دغا کرتے تھے
میں نے یہ بات زمانے سے چھپا رکھی تھی
ہم کبھی مست جوانی میں ہوا کرتے تھے
حیف جب مرگ مفاجات نے توڑا مجھ کو
ورنہ تو خون میں شامل تھا وفا کرتے تھے

7
دستِ وحشت میں ہوں نکلنا ہے
دن کو یا رات کو سنبھلنا ہے
گیلی آنکھوں میں غم چھپانے کا
زہر جیسے اُگل نگلنا ہے
لاوہ آتش فشاں کا ہے برلب
گردنِ کوہ سے اُبَلْنا ہے

0
5
آسرے ان کے جیا وہ بھی میں نے دیکھ لیا
اس نے جب چھوڑ دیا وہ بھی میں نے دیکھ لیا
بارہا میرا پلٹ کر یہ نظر ڈالنا بھی
کس نے محسوس کیا وہ بھی میں نے دیکھ لیا
تیز غصے کا بہت زہر تھا اُس آن مرا
زہر کا گھونٹ پیا وہ بھی میں نے دیکھ لیا

0
12
ذرا سا اترا ہے چہرہ نہ دیکھو
ہماری چال ہے مہرا نہ دیکھو
نہ مجھ سے ہو سکے گی سرد مہری
مرے اطراف کا کہرا نہ دیکھو
عجب سی منطقی میری ڈگر ہے
پرائے ہاتھ میں زہرہ نہ دیکھو

0
11
ہر بزم میں شامل ہیں وہ کامل رنگیں
مر جاتے ہیں ان پر کئی بسمل رنگیں
آئی ڈی پہ تصویر میں تو لڑکی ہے
لڑکوں نے بنائے کئی محفل رنگیں

0
11
حقیقی موت آئی ہے
بہت تڑپ کے، دن یہ ہاتھ آیا ہے
گزارشات سن لو نا!
یہ آخری ہی باب میں رقم ہو گا
ہماری موت ہوتے ہی
حنوط لاش کرکے یوں صدا لگاؤ گے، سنو!

0
14
کب قابلِ بھروسہ تھے جس کو جدھر چنا
وہ سب نئے تھے لوگ جنہیں ہم سفر چنا
تجھ سے بچھڑ کے اور بھلا بات کیا ہوئی
فرقت سلگ سلگ کے جلانا اگر چنا
دیوار میں چنا ، اسے ایسی سزا بھی دی
جب بھی کہیں چنا تھا سو اپنا جگر چنا

0
19
یہ سلسلہ دیر تک، ہر شام چلتا رہا
ہر تذکرے میں وہیں، اک نام چلتا رہا
اک چاند چہرہ بنا ، خوابوں میں ڈیرہ ڈلا
شب بھر رہی چاندنی، الہام چلتا رہا
ہے گلشنوں کا نگر، بنتا ہوں نورِ نظر
یہ کون سا خواب ہے، ابہام چلتا رہا

0
10
ٹوٹنے سے بچنا تھا یہ بہت ضروری تھا
ٹوٹ کر بھی جُڑنا تھا یہ بہت ضروری تھا
دشت کا یہ موسم بھی تیرے ہاتھ بدلے گا
ہر جنم کا سپنا تھا یہ بہت ضروری تھا
بوجھ ان گناہوں کا میرے دل سے ہلکا ہو
تیرے در پہ جھکنا تھا یہ بہت ضروری تھا

0
17
مربوط کہانی میں ترا غم اکثر
وہ ساتھ میں لکھتا ہے مرا غم اکثر
آگے بھی تو صفحات میں غم لکھا ہے
قرطاس پہ آ کر جو گرا غم اکثر

0
11
کبھی آؤ
یہ رسمیں توڑ دیتے ہیں
دلوں کو موڑ لیتے ہیں
نئے رشتوں کی زنجیریں
قسم سے توڑ ڈالو تم
چلو یہ چھوڑ دیتے ہیں

0
22
نازک خیال کا کوئی چہرہ بنا گیا
چہرہ خیال سے ذرا گہرا بنا گیا
ہے یہ ستم ظریفی تو حالات کا نہ پوچھ
قسمت سے کھیل کر مجھے صحرا بنا گیا
ہاتھوں کو پڑھتے ساتھ ہی تارے بدک گئے
علمِ نجوم اک نیا تارہ بنا گیا

0
80
رشتوں کے سمندر میں عجب ڈوب گیا ہوں
بھائی پہ پڑوسی کا غضب ڈوب گیا ہوں
لوگوں سے پڑا واسطہ اللّٰہ ہی بچائے
ہم کو ملا ظالم کا لقب ڈوب گیا ہوں
اس دورِ منافق میں یہ دل ڈوبنا ہی کیا
وحشت زدہ ہوں ڈر کے سبب ڈوب گیا ہوں

0
17
خود سے جب ہم کلام ہوتی ہے
ہر گھڑی تیرے نام ہوتی ہے
درد اب اور بڑھ گیا ہوگا
غم سے بیمار شام ہوتی ہے
زندگی سے میں خوش نہیں ہوتا
سانس کی بس غلام ہوتی ہے

0
92
غم کی قربت سے یہ آثار نظر آئے ہیں
غم کے وارث سبھی غمخوار نظر آئے ہیں
گریہ کیا ضبط کروں ضبط نہ ٹوٹے کیسے
آج چہرے بڑے بیمار نظر آئے ہیں
منطقی ربط کی دیواریں عبوری سمجھو
دل میں آئے کھڑے سرکار نظر آئے ہیں

0
19
غم کی قربت سے یہ آثار نظر آئے ہیں
غم کے وارث سبھی غمخوار نظر آئے ہیں
گریہ کیا ضبط کروں ضبط نہ ٹوٹے کیسے
آج چہرے بڑے بیمار نظر آئے ہیں
منطقی ربط کی دیواریں عبوری سمجھو
دل میں آئے کھڑے سرکار نظر آئے ہیں

0
25
حقیقتاً تو خیالوں میں تیرے گم صم ہوں
کہیں پہ چشمِ تصور میں گویا میں تم ہوں
کرو نا! زار کی باتیں ہماری محفل میں
یہاں پہ کوئی نہیں ہے خیال میں گم ہوں
تُو خود میں گم ہی سہی نغمگی ہماری ہے
تمھاری ذات پہ چھایا ہوا ترنم ہوں

0
35
محبت کے سروں میں جان ڈالو کچھ کہو ہم سے
کہو دریا دلی سےغم میں ڈوبے ہیں بڑے غم سے
اسی کی داستاں ہے تو وہ کیسے سن نہیں سکتا
کہانی میں بہت سی ان کہی باتیں سنو ہم سے
تمھاری یاد کی بارش میں گیلے خواب لے کر ہم
پھسل کر ، گر گئے ہیں بے خیالی میں بڑے دھم سے

10
جہانِ کل سے ہو محبوب تیرا بیٹا ہوں
ماں تیرے نام سے منسوب تیرا بیٹا ہوں
ترے پیر تلے جنت ، خوشی میسر ہے
مجھے ہیں جنتیں مطلوب تیرا بیٹا ہوں
وفا کے دام نہیں، شکر کس طریقے ہو
شکر ہے آنکھیں ہیں مرطوب تیرا بیٹا ہوں

0
18
لوٹ آؤں گر اجازت ہےتری
دل مرا مانگے رفاقت ہے تری
دل کی خواہش ہے یہ بَن آباد ہو
زندگی میری رعایت ہے تری
اب گلہ کیسے کروں گا جان کر
ہر ادا قاتل مہارت ہے تری

0
16
چارہ گر چھوڑ گیا ساتھ تو حیرت کیوں ہے
اب دمِ مرگ ملاقات کی حسرت کیوں ہے
میں نے طوفان کے تھمنے کی دعا مانگی تھی
پھر گئی رات یہ بپھری ہوئی قدرت کیوں ہے
خفتیں ہیں وہ مٹانے کی ذرا بات کرے
صاف منصف سے کہو مانگتا اجرت کیوں ہے

0
30
عشق کا عنوان بننا چاہتا ہوں
با وفا انسان بننا چاہتا ہوں
اب مرے حالات کیوں ایسے بنے ہیں
ہائے کیوں طوفان بننا چاہتا ہوں
بات اس نکتے پہ آکر رک گئی ہے
سوچ لو مہمان بننا چاہتا ہوں

0
27
دنیا تیری چاہت میں تگ و دو
درجوں کی بھی جنت میں تگ و دو
رنگِ گل سے ہی تیری ندرت ہے
خوشبو کی بھی شرکت میں تگ و دو
رخِ جاناں کو چھو کر اب چاہوں
تمہیں ملنے کی حسرت میں تگ و دو

0
36
ہجر کی رات کے ہیں منتشر قصے
حشر سے بھی بڑے ہیں مختصر قصے
توبہ ہے میری گر یہ بات بن جائے
کیا سنائیں خطا کے بیشتر قصے
در بہ در ٹھوکروں کا ذکر کیوں کرتا
گر نہ ہوتے جفا کے منتظر قصے

0
30