جب تری جان ہو گئی ہوگی​
جان حیران ہو گئی ہو گی​
شب تھا میری نگہ کا بوجھ اس پر​
وہ تو ہلکان ہو گئی ہو گی​
اس کی خاطر ہوا میں خوار بہت​
وہ مِری آن ہو گئی ہو گی​
ہو کے دشوار زندگی اپنی​
اتنی آسان ہو گئی ہو گی​
بے گلہ ہوں میں اب بہت دن سے​
وہ پریشان ہو گئی ہو گی​
اک حویلی تھی دل محلے میں​
اب وہ ویران ہو گئی ہو گی​
اس کے کوچے میں آئی تھی شیریں​
اس کی دربان ہو گئی ہو گی​
کمسنی میں بہت شریر تھی وہ​
اب تو شیطان ہو گئی ہو گی​
بحر
خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع
فاعِلاتن مفاعِلن فِعْلن
خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع
فَعِلاتن مفاعِلن فِعْلن
خفیف مسدس مخبون محذوف
فاعِلاتن مفاعِلن فَعِلن
خفیف مسدس مخبون محذوف
فَعِلاتن مفاعِلن فَعِلن

1
315
جون ایلیا ❤️

0