بہ نالۂ دلِ دل بستگی فراہم کر
متاعِ خانۂ زنجیر جز صدا، معلوم

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فِعْلن


0
25
اسدؔ! یہ عجز و بے سامانیٔ فرعون تَوام ہے
جسے تو بندگی کہتا ہے دعویٰ ہے خدائی کا

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
19
جراحت تحفہ، الماس ارمغاں، داغِ جگر ہدیہ
مبارک باد اسدؔ، غمخوارِ جانِ دردمند آیا

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
23
جادۂ رہ خُور کو وقتِ شام ہے تارِ شعاع
چرخ وا کرتا ہے ماہِ نو سے آغوشِ وداع

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
17
اے اسدؔ ہم خود اسیرِ رنگ و بوئے باغ ہیں
ظاہراً صیّادِ ناداں ہے گرفتارِ ہوس

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
20
گل کھلے غنچے چٹکنے لگے اور صبح ہوئی
سر خوشِ خواب ہے وہ نرگسِ مخمور ہنوز

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلن


0
18
ستم کش مصلحت سے ہوں کہ خوباں تجھ پہ عاشق ہیں
تکلف بر طرف! مل جائے گا تجھ سا رقیب آخر

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
18
تجھ سے مقابلے کی کسے تاب ہے ولے
میرا لہو بھی خوب ہے تیری حنا کے بعد

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
19
ہلاکِ بے خبری نغمۂ وجود و عدم
جہان و اہلِ جہاں سے جہاں جہاں آباد

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فِعْلن


0
20
لو ہم مریضِ عشق کے بیمار دار ہیں
اچھاّ اگر نہ ہو تو مسیحا کا کیا علاج!!

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
34
معزولئ تپش ہوئی افرازِ انتظار
چشمِ کشودہ حلقۂ بیرونِ در ہے آج

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
33
مند گئیں کھولتے ہی کھولتے آنکھیں غالبؔ
یار لائے مری بالیں پہ اسے، پر کس وقت

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن


0
15
عیب کا دریافت کرنا، ہے ہنر مندی اسدؔ
نقص پر اپنے ہوا جو مطلعِ، کامل ہوا ہے

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
15
پھر وہ سوئے چمن آتا ہے خدا خیر کرے
رنگ اڑتا ہے گُلِستاں کے ہوا داروں کا

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلن


0
19
شکوۂ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا
غالبؔ ایسے گنج کو عیاں یہی ویرانہ تھا

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
21
اگ رہا ہے در و دیوار سے سبزہ غالبؔ
ہم بیاباں میں ہیں اور گھر میں بہار آئی ہے

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن


0
29
زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالبؔ
ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن


0
68
پینس میں گزرتے ہیں جو کوچے سے وہ میرے
کندھا بھی کہاروں کو بدلنے نہیں دیتے

مفعول مفاعیل مفاعیل فَعُولن


0
20
گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا
وہ جو رکھتے تھے ہم اک حسرتِ تعمیر، سو ہے

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن


0
33
نہ پوچھ حال اس انداز، اس عتاب کے ساتھ
لبوں پہ جان بھی آ جاۓ گی جواب کے ساتھ

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فَعِلن


0
19
از مہر تا بہ ذرّہ دل و دل ہے آئینہ
طوطی کو" شش جہت" سے مقابل ہے آئینہ

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
28
فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں
نہیں رفتارِ عمرِ تیز رو پابندِ مطلب ہا

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
20
ضعفِ جنوں کو وقتِ تپش در بھی دور تھا
اک گھر میں مختصر سا بیاباں ضرور تھا

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
18
مستعدِّ قتلِ یک عالم ہے جلادِ فلک
کہکشاں موجِ شفق میں تیغِ خوں آشام ہے

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
16
صبا لگا وہ طمانچہ طرف سے بلبل کے
کہ روئے غنچہ سوئے آشیاں پھر آ جائے

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فِعْلن


0
26
نہ حیرت چشمِ ساقی کی، نہ صحبت دورِ ساغر کی
مری محفل میں غالبؔ گردشِ افلاک باقی ہے

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
16
زندانِ تحمل ہیں مہمانِ تغافل ہیں
بے فائدہ یاروں کو فرقِ غم و شادی ہے

مفعول مفاعیلن مفعول مفاعیلن


0
21
عجز و نیاز سے تو وہ آیا نہ راہ پر
دامن کو اس کے آج حریفانہ کھینچیے

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
23
سیاہی جیسے گر جاوے دمِ تحریر کاغذ پر
مری قسمت میں یوں تصویر ہے شب ہائے ہجراں کی

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
43
ہوں میں بھی تماشائیٔ نیرنگِ تمنا
مطلب نہیں کچھ اس سے کہ مطلب ہی بر آوے

مفعول مفاعیل مفاعیل فَعُولن


0
21
لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی
قیامت کشتۂ لعلِ بتاں کا خواب سنگیں ہے

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
31
ملی نہ وسعتِ جولان یک جنوں ہم کو
عدم کو لے گئے دل میں غبارِ صحرا کو

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فِعْلن


0
19
ابر روتا ہے کہ بزمِ طرب آمادہ کرو
برق ہنستی ہے کہ فرصت کوئی دم دے ہم کو

فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلن


0
14
زمانہ سخت کم آزار ہے، بہ جانِ اسدؔ
وگرنہ ہم تو توقعّ زیادہ رکھتے ہیں

مفاعِلن فَعِلاتن مفاعِلن فَعِلن


0
38
ہو گئی ہے غیر کی شیریں بیانی کارگر
عشق کا اس کو گماں ہم بے زبانوں پر نہیں

فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلاتن فاعِلن


0
19
اسدؔ ہم وہ جنوں جولاں گدائے بے سر و پا ہیں
کہ ہے سر پنجۂ مژگانِ آہو پشت خار اپنا

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن


0
16
لوں وام بختِ خفتہ سے یک خوابِ خوش ولے
غالبؔ یہ خوف ہے کہ کہاں سے ادا کروں

مفعول فاعلات مفاعیل فاعِلن


0
26
ہے کہاں تمنّا کا دوسرا قدم یا رب
ہم نے دشتِ امکاں کو ایک نقشِ پا پایا

فاعِلن مفاعیلن فاعِلن مفاعیلن


0
77