دل نا امید ہی نہیں ، ناکام بھی تو ہے
غم کی یہ شام حشر کا ہنگام بھی تو ہے
بے چینیوں کے ساتھ کچھ آرام بھی تو ہے
دورِ خزاں میں یادِ گل اندام بھی تو ہے
نازِ بہار رونقِ گلشن کے ساتھ ساتھ
حسن و جمالِ عارضِ گلفام بھی تو ہے
یوں ہی نہیں بھٹک رہیں دشتِ جنوں میں ہم
مقصود ایک منزلِ بے نام بھی تو ہے
قیدِ وفا میں لذتِ فریاد ہی نہیں
قیدِ وفا میں لذتِ آلام بھی تو ہے
گو شیخ کو ہے دعویِٰ عشقِ رسولِ پاک
حبِ بتان و الفتِ اصنام بھی تو ہے
وحشی مزاج و رندِ بلا نوش ہی نہیں
سمرن تمہارا عاشقِ بدنام بھی تو ہے

0
3
34
بہت خوب - واہ

شکریہ ارشد صاحب !

0
بہت خوب بھئی

0