غزل
دھوپ سے سایہءِ دیوار تک آتے آتے
"مر گئے ہم ترے معیار تک آتے آتے "
بیت جاتی ہیں کئی وصل کی گھڑیاں اس میں
آپ سے، تم سے، سنو یار تک آتے آتے
ہے ترے غم کی حرارت کا اثر اشکوں پر
سوکھ جاتے ہیں یہ رخسار تک آتے آتے
ہم پہ جو گزری خُدا تم کو بچا لے اس سے
تری نفرت سے ، ترے پیار تک آتے آتے
بے وفائی کے گلے، ہجر کے آزار کا دکھ
بھول جاتے ہیں درِ یار تک آتے آتے
ہم نے سیکھا ہے تری ذات سے انکار کا گُر
ہم نفی کرتے ہیں اقرار تک آتے آتے
کلام : فیصل احمد

11