یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا!
اگر اور جیتے رہتے ، یہی انتظار ہوتا
ترے وعدے پر جئے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا
کہ خوشی سے مر نہ جاتے، اگر اعتبار ہوتا
تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا
کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


0
171
جو نہ نقدِ داغِ دل کی کرے شعلہ پاسبانی
تو فسردگی نہاں ہے بہ کمینِ بے زبانی
مجھے اس سے کیا توقّع بہ زمانۂ جوانی
کبھی کودکی میں جس نے نہ سنی مری کہانی
یوں ہی دکھ کسی کو دینا نہیں خوب ورنہ کہتا
کہ مرے عدو کو یا رب ملے میری زندگانی

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


0
32
یہ پیام دے گئی ہے مجھے بادِ صبح گاہی​
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی​
تری زندگی اسی سے، تری آبرو اسی سے​
جو رہی خودی تو شاہی، نہ رہی تو روسیاہی​
نہ دیا نشانِ منزل مجھے اے حکیم تو نے​
مجھے کیا گلہ ہو تجھ سے، تو نہ رہ نشیں نہ راہی​

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


72
میرے دل میرے مسافر
ہوا پھر سے حکم صادر
کہ وطن بدر ہوں ہم تم
دیں گلی گلی صدائیں
کریں رخ نگر نگر کا
کہ سراغ کوئی پائیں

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


0
98
کیے آرزو سے پیماں جو مآل تک نہ پہنچے
شب و روزِ آشنائی مہ و سال تک نہ پہنچے
وہ نظر بہم نہ پہنچی کہ محیطِ حسن کرتے
تری دید کے وسیلے خد و خال تک نہ پہنچے
وہی چشمۂ بقا تھا جسے سب سراب سمجھے
وہی خواب معتبر تھے جو خیال تک نہ پہنچے

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


0
70
کسی اور غم میں اتنی خلشِ نہاں نہیں ہے
غمِ دل مرے رفیقو غمِ رائیگاں نہیں ہے
کوئی ہم نفس نہیں ہے کوئی رازداں نہیں ہے
فقط ایک دل تھا اب تک سو و ہ مہرباں نہیں ہے
کسی آنکھ کو صدا دو کسی زلف کو پکار و
بڑی دھوپ پڑ رہی ہے کوئی سائباں نہیں ہے

فَعِلات فاعِلاتن فَعِلات فاعِلاتن


0
95