رحمتوں میں لپٹی تھی قرینے کی بارش
یاد بہت آئے گی مدینے کی بارش
زائر لوٹ رہے تھے دامن پھیلا کر
یثرب میں ہوتی ہے خزینے کی بارش
افری گر کے تجھے اُٹھنا آ ہی گیا آخر
رازِ حیات بتا گئی مدینے کی بارش
منظر کیا سُناؤں درِ مصطفے کے میں افری
ہوتی رہی آنکھوں سے نگینے کی بارش

0
8