غنچہِ دل کھلا میرے اختر رضا
میرے دل میں سما میرے اختر رضا
جان ہے آپ کی ہے یہ تن بھی ترا
خوب اس کو جلا میرے اختر رضا
آس ہے دید کی پیاس ہے دید کی
اب تو اس کو بجھا میرے اختررضا
فضل رب ہے مجھے تیرا دامن ملا
سایہ ہو یہ سدا میرے اختر رضا
میرے کردار پر میرے افعال پر
چھاپ اپنی لگا میرے اختر رضا
سارے سنسار میں تو ہی اپنا لگا
اے بریلی کے شاہ میرے اختر رضا
فضل و جود و کرم علم و عرفان میں
تیرا چرچا سنا میرے اختر رضا
اہل سنت کی آنکھوں کا تارا ہے تو
ہے تو سب کی ردا میرے اختر رضا
تا ابد اے خدا یوں مہکتا رہے
گلستانِ رضا میرے اختر رضا
نائبِ غوث اعظم ہیں ذیشان یہ
اخترِ قادری میرے اختر رضا

36