ہم وطن سے ہی وفا کرتے ہیں
چاہیں تو جاں بھی دیا کرتے ہیں
جس مٹی میں ہوئی پیدائش ہے
اس کی خاطر ہی جیا کرتے ہیں
سب نچھاور کرینگے تن من دھن
ذات کو اپنی فنا کرتے ہیں
جب ضرورت رہیگی دوڑینگے
چاہ میں ایسے مٹا کرتے ہیں
سانس و دھڑکن میں سمایا پرچم
دل، بدن، روح فدا کرتے ہیں
نعرہ کثرت میں ہے وحدت اپنا
ہم سبھی ایک، کہا کرتے ہیں
نام ہو ملک کا روشن ناصؔر
ہاتھ پھیلائے دعا کرتے ہیں

0
24