شبِ غم ہوتی یا روزِ قیامت ہوتا
ہر لحظہ تازہ دم وہ سر او قامت ہوتا
اس کو میں یوں ہی تو ربیل نئیں کہتا تھا
ریزاں رُت میں گل اندام سلامت ہوتا

0
63