غزل۔۔
چاہتیں جذبِ دروں مانگتی ہیں
سر پھری ہوں تو جنوں مانگتی ہیں
دھڑکنیں اپنی روانی کے لیے
تیرے لہجے کا سکوں مانگتی ہیں
اس جنم میں تجھے پانے کے لیے
قسمتیں کن فیکوں مانگتی ہیں
میری باتیں بھی معانی کے لیے
تیری آنکھوں کا فسوں مانگتی ہیں
حرفِ اَسرار کو پانے کے لیے
حیرتیں سوزِ دروں مانگتی ہیں

0
2