ابھی آزما لو..
ہوا تیرے آنگن میں رقصاں رہے گی
چراغوں کے سائے بھی محفوظ ہونگے
کسی پیڑ پر کوئی سرسبز پتّا نہ انگڑائی لےگا نہ جھومے گا جب تک
تری آنکھ اذنِ تحّرک نہ دے گی
اجازت کا اس کو تبرّک نہ دے گی
ابھی آزما لو
ابھی آسماں تیرے قدموں کے نیچے بچھا کے دکھا دوں
ستارے لٹا دوں
معطر گلابوں کے گہنوں سے تیرا سراپا سجا دوں
تجھے زندگی کا مسیحا بنادوں
ابھی آزمالو
دعاؤں کی ظلمت سے آگے نکل کر
کچھ ایسے عبادت کروں تیری جاناں
کہ ہر اہلِ دل کا بنے تو ہی قبلہ
تری دید ہر اک کی آنکھوں کا سرمہ بنا کے دکھادوں
ابھی آزما لو
اجالوں سے اجلی وفائیں ہوں تیری
نہ ہوتے ہوئے بھی صدائیں ہوں تیری
نہ پا کے بھی سمجھیں کہ تیرا چلن ہے
خزاؤں میں بھی گل فشاں ہر چمن ہے
پرانے رواجوں کی زخمی صدائیں
تجھے خواب میں بھی نہ آکے ستائیں
میری آرزو کی طلسماتی دنیا میں خود کو بسا لو
ابھی آزما لو----ابھی آزما لو

0
62