راستہ ہم قدم نہیں ہوتا
فاصلہ تجھ سے کم نہیں ہوتا
مری دنیا ہے میرے ہونے سے 
میں نہ ہوتا تو غم نہیں ہوتا
تیری یادوں کو چھوڑ دوں تنہا 
مجھ سے ایسا ستم نہیں ہوتا 
چار سو روشنی وفا کی ہے 
ہے اجالا جو کم نہیں ہوتا 
یوں تو سب کو ملال ہوتا ہے
 ساری آنکھوں میں نم نہیں ہوتا
 کئی ایسے بھی زخم ہوتے ہیں 
جن کے ہونے کا غم نہیں ہوتا

0
22