اک کہانی زندگی
تھی سہانی زندگی
وقت کی رفتار تھی
اور نمانی زندگی
پہلے کا وہ دور تھا
تھی دوانی زندگی
جدتوں کا دور ،پر
ہے پرانی زندگی
اب تلک تو ساتھ ہے
مہربانی زندگی
ظالموں کو یاد ہو
ہے یہ فانی زندگی
راجا ہیں گر آپ تو
راج دھانی زندگی
اک نیا وجدان دے
اے گیانی زندگی
آگ ہے دل میں مرے
ڈال پانی زندگی
بے خودی کے گھیر میں
ہے سیانی زندگی
لخت لخت ہو گیا
پر نہ مانی زندگی
حسرتوں کی ٹال پل
کیا جلانی زندگی
یار گر مل جائے ،ہے
شادمانی زندگی
ٹہرے کیوں ہو یار تم
ہے روانی زندگی
کوچہ کوچہ چھان لے
اے سیلانی زندگی
پہنچے ہیں منزل پہ یوں
ہے سجانی زندگی
ڈھنگ سے جی لو اسے
نا ہے ثانی زندگی
در حقیقت موت کی
ترجمانی زندگی
لوگ آتے جاتے ہیں
یہ ہے جانی زندگی
بے خطر چلتے رہو
یوں بھی جانی زندگی
آفتوں کے دور میں
نا گہانی زندگی
نیک ہیں اعمال گر
کب ہے فانی زندگی
قبر میں جانا ہے بس
لوٹ آنی زندگی
روح گر ہے شاد تو
ہے رو حانی زندگی
مرشدی کے سائے میں
ہے بتانی زندگی
خاکی ان کے نام پر
نذر مانی زندگی

17