بند کمرے میں چلی آئی مَیں کچھ نہ کہہ سکا
مَوت آ پہنچی تو ہر تدبیر نے دھوکہ دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹے کی جان کے لئے ماں بھینٹ چڑھ گئی
آنکھوں کی شرم رنگِ حنا کچھ نہیں بچا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نام ہے امید لیکن نا امید
کون ہو تم کس جہاں سے آئے ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماؤں کے پَیروں کے نیچے ہے بہشت
جس نے ماں دیکھی نہ ہو وہ کیا کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کئی تازہ زخم لگا گئے
ابھی پہلے چاک سلے نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیکھ کر باہر سے میخانے کو مَے ملتی نہیں
شام کو تشریف لائیں اب وہ شے ملتی نہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل عجب اک حادثہ دیکھا ہے قبرستان میں
ایک مُردے کو دبا کر باقی مُردے چل دئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ سالوں کی بات کرتے ہیں
لوگ صدیوں کو بھُول جاتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مُلتان کی گرمی
قبر کی تاریکیوں سے کیا ڈراتا ہے مجھے
قبر سے پہلے بھی میری زندگی تاریک تھی
ہاں نظر آتی ہے مجھ کو دُور سے دوزخ تری
باخدا ملتان میں یہ اور بھی نزدیک تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مَوت کتنی بار گزری جوہرِ تخلیق سے
زندگی اک جست میں ہی پاگئی رازِ حیات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی میں درد ہے خوشیاں ہیں محسوسات ہیں
موت کے دامن میں ماتم کے سوا کچھ بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گریباں چاک رہتا ہے مگر کچھ کر نہیں سکتا
کہ مَوت آنے سے پہلے کوئی انساں مر نہیں سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راستوں کے پیچ و خم نے کیا دیا تجھ کو امید
ان کے دامن میں تجسس کے سوا کچھ بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انہیں سپنے میں دیکھا گویا فردوسِ بریں دیکھی
مری حرماں نصیبی مَیں نے اپنی ماں نہیں دیکھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت کچھ سوچ کر مَیں نے یہی اک راز پایا ہے
جسے اپنا سمجھتے تھے وہی سب سے پرایا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کاخ و کُو ویران کر کے رکھ دئے لیکن امید
آندھیاں تتلی کو پھولوں سے جدا نہ کر سکیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ کو ہر گام پر سجدے کرنے پڑے
کیا کریں جب زمانہ خدا ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فیصل آباد تجھ کو مَیں بھُولا نہیں
چھوڑ کر تجھ کو مجھ سے گناہ ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شیر خواری میں ماں سے بچھڑنا پڑا
میرا اور اک سجدہ قضا ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انگلی پکڑ کے کل جسے چلنا سکھا دیا
آج اس نے سب کے رو برو نیچا دکھا دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس کی اساس پانی کی اک بُوند ہے اسے
لوگوں نے مکر وفن سے سروں پر بٹھا دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پُورے جہاں میں دُھوم تھی جس دیس کی کبھی
اس کو غنیمِ شہر نے ویران کر دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ سے عجیب ہاتھ مرا پِیر کر گیا
میری زمیں پہ اپنا گھر تعمیر کر گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غربت و افلاس کا عالم کہ اب
دال حاضر ہے تو غائب روٹیاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس نے بچّوں کے لئے بے لَوث قربانی نہ دی
وہ ولی اللہ تو ہو سکتی ہے لیکن ماں نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تقسیمِ وراثت ہو اگر عدل پہ مبنی
وہ تیرا فلک ہے یہ زمیں میری زمیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ساری دنیا کا جھمیلا دیکھ کر
مَوت آپہنچی اکیلا دیکھ کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی تحفہ کروں ارسال ان کو
عنایت کر دیں گر سائز کمر کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لا تقنٰطو کا ورد ہے اور نا امید ہو
کر دے خدا تمہیں کسی طوفاں سے آشکار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سُونگھتا رہتا ہوں اک اک پھول کو
ایک میں بھی ماں تری خوشبُو نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گر تری عمرِ رواں کا کچھ نہیں مقصد امید
پھر فقط زندہ ہے تُو مردم شماری کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھُپ اندھیرے میں اکیلی آ گئی
آ دبوچا مَوت نے مجھ کو امید
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوزے کے شوق میں یونہی مِٹّی خراب کی
اے کاش میری رُوح نہ ہوتی تراب کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہا ہے واعظ نے ایک ربّ ہے وہ جانتا ہے کہ اور بھی ہیں
یہ مال و دولت وکیل و منصف خدا کی بستی میں کتنے ربّ ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیٹے کو بہو بیٹی کو داماد لے گیا
تنگ آ کے مائی بابا بھی قبروں میں جا بسے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لوگ کہتے ہیں میرا کوئی گھر نہیں
عارضی گھر بنانے کا کیا فائدہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظریں جھُکا کے بات کیا کر اے آدمی
جنّت سے جس کو دھکّے ملے تُو وہی تو ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ضروری تو نہیں مر کر ہی سارے دفن ہوں
غور سے دیکھیں تو ہر اک گھر میں ہیں مدفن کئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس نے چھینا ہے وہی اب اس کا ذِمّے دار ہے
میری جنّت بھی گئی ہے تو مری ماں بھی گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرے بچّے مرے دل کے ارادے جان لیتے ہیں
مَیں دن کو رات کہہ دوں رات کو دن مان لیتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جہاں پر سرورِ اقدس نگاہِ شوق فرمائیں
وہاں جبریل و اسرافیل فرشِ راہ بن جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو چلے جاتے ہیں پھر واپس نہیں آتے ادھر
کیوں کہ وہ سب جانتے ہیں کچھ نہیں رکھّا یہاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھک کے آبیٹھا پرندہ پھر اسی منڈیر پر
جس پہ اک عرصہ گزارا دوستوں کے درمیاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گزر تو جائے گی تیرے بنا بھی زندگی لیکن
بہت بے چین و افسردہ بڑی مشکل سے گزرے گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب مرے شہر میں کوئی نہیں اوباش امید
سارے بدنام لٹیرے تری سرکار میں ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور بھی کتنے ہی رشتے ہیں وفا کے پیار کے
پر اکیلی ماں ہی ہے جو جیتتی ہے ہار کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لاشوں کی جانچ سے کبھی ملتا نہیں سراغ
کچھ بھوک سے مرے تھے کچھ سردی سے مر گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وعدہ تو تھا بہار کا اب آ گئی خزاں
عمرِ رواں گزر گئی ہے انتظار میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مر گیا ہے آج تو زندہ تھا کب
ہاں یہ سچ ہے آج دفنایا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس کو دکھ سہنے کی عادت ہو گئی
اس کو جنّت کس طرح آئے گی راس
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا حشر میں غریب سے بھی ہو گی گفتگو
کہ زندگی بھی حشر کی صورت گزر گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی اولاد پہ جی بھر کے لٹایا زرومال
دال کے نرخ پہ محتاج کی تکرار بھی دیکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
باغِ جنّت میں دخول اس کا یقینی ہے امید
واسطہ جس کا کسی طَور مدینے سے رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس بد نصیب ماں کی ابھی جیب کٹ گئی
ممکن ہے اس کی صرف یہی کائنات ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محض بینائی نہیں یہ معجزاتِ عشق ہیں
بند آنکھوں سے بھی جب دیکھا مدینہ آ گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بچّوں کی تسلّی کو چڑھا رکھّی ہے سبزی
اب ماں بھی جگر گوشوں کو دینے لگی دھوکہ

0
15