کسی سے دل لگی کرنا ہنسی کا کھیل نہیں
یہ ایک طرفہ محبت مجھے قبول نہیں
گواہ عینی ہو جیتے مقدمہ بھی وہی
دلیل کے بنا مانے اگر عدیل نہیں
مزاج سادگی والا مفید بخش بڑا
زبان شیریں رہے، ہوتے وہ ذلیل نہیں
سفر ابد کا بہت لمبا ہے، لے توشہ یہاں
قیام دنیا کا تھوڑا، اِسے تُو بھول نہیں
نظریہ تنگ ہو، وہ خیر چاہتے ہی نہیں
وسیع سوچ رکھیں ہم، بنیں بخیل نہیں
نکھار دل میں ہو، چہرے حسین رہتے بہت
ہو کینہ سینہ میں وہ سینہ بھی جمیل نہیں
جلن تباہ ہی ناصؔر کرے گی اس لئے سب
حسد سے پاک ہی رہنا، رکھیں بھی میل نہیں

0
22