کچھ رنجش ہے تلخ سی اے زندگی سن
ہے نا کوئی مراسم اے زندگی سن
ٹھہرو گی جب بشرِ خدا دیکھ کہ تم
ہوگا پھر غلبہ اجل اے زندگی سن
بچھڑے تجھ سے چاہنے والے تیرے
ملا تجھے بھی تو دغا اے زندگی سن
تمناء ہوئ ختم اے زندگی سن
جی کر پھر کیا کرنا اے زندگی سن
ہاں چل بسے سب رہبر اے زندگی سن
اب سرگشتہ ہو کر رک اے زندگی سن

0
32