میں تو نبیؐ کا ادنیٰ سا غلام ہوں
قبول کر مجھے خدا، غلام ہوں
حضورؐ کے طفیل میں پہنچ سکوں
مدینہ دل میں ہے بسا، غلام ہوں
بلالؓ کی اذانیں گونجی تھیں جہاں
ملے سکوں اُسی فضا، غلام ہوں
پڑوسی صفہ کے بزرگ آپؐ کے
غریبوں کے تھے رہنما، غلام ہوں
علم بلند دیں کا کیسے ہو چلا
سبق احد ہی کا رہا، غلام ہوں
حقوق نے بھی فرق کو مٹا دیا
نہ چھوٹا کوئی نا بڑا، غلام ہوں
درود پڑھ سکوں ناصؔر میں آپؐ پر
سلام لاکھوں ہوں عطا، غلام ہوں

0
27