ترے وصف کیسے کروں میں بیاں
کہ اوقات میری ہے اتنی کہاں
کہ رب نے ترے خود کیا ہے بلند
ترے ذکر کو کیسے آئے خزاں
یہاں بھی وہاں بھی کہ ہر سو شہا
درودوں سے مہکا ہوا ہے سماں
سرِ طور دیدار ہوتا نہیں
اے محبوب تشریف لائیں یہاں
پڑھا سنگ ریزوں نے کلمہ ترا
نہاں پر عیاں ہے عیاں سے نہاں
ترے در پہ اٹھتی نہیں ہے نظر
تو کیسے کوئی سر اٹھائے وہاں
خفی تجھ سے محبوب رکھتا بھی کیا
کہ تیرے لیے ہی بنا ہے جہاں
کبھی یہ زباں لڑکھڑاتی نہیں
کہ ذکرِ نبی جب ہو ورد ِزباں

90