اس نے پوچھا تمہیں تتلیاں پسند ہیں نہ؟
میں نے اثبات میں سر ہلا دیا
اُدھر خاموشی رہی۔۔۔۔
اک لمبا سکوت رہا
مگر میں کشمکش میں مبتلاء رہی
کیا میں اسے بتاؤں کہ۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟
مجھے تتلیوں سے زیادہ
تتلیاں بھیجنے والا ہاتھ پسند ہے۔۔
اور وہ چہرہ، وہ آنکھیں بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تتلیاں مجھے پسند ہیں،
مگر اس میں اتنے رنگ کہاں جو تم میں ہیں
میں تتلیوں پر ،اُنکے خوبصورت پنکھوں پر
کوئی افسانہ لکھ سکتی ہوں۔۔۔؟
ہاں یقیناً۔۔۔
یا شاید ایک ناول بھی،
پر جب تُم موضوعِ سخن ہو نہ،
تو میں اِک داستان لکھ ڈالوں۔۔۔۔۔۔۔
اور اس بیچ ہزاروں تتلیاں ان گنت پھولوں پر
منڈلاتی ہوئی سیانی ہو جائیں۔۔۔۔۔۔۔
ہزاروں پروانے شمع پر نثار ہو چکے ہوں۔۔۔
کتنے تشنہ کام سیراب ہوکر واپس گھروں کو لوٹ جائیں۔۔۔۔۔۔
کتنے راہی اپنے راستے طے کر چکے ہوں۔۔۔۔
سارا منظر بدل چکا ہو۔۔۔
کتنی صبحیں راتوں میں اور راتیں صبحوں میں
تحویل ہو چکی ہونگی۔۔۔۔۔۔
مگر تنہا کونے میں بیٹھی ایک دیوانی سے لڑکی
محو تحریر ہوگی۔۔۔۔
لکھتے لکھتے اُسکی ہاتھ شُل ہو گئے
بالوں میں چاندی در آئی۔۔۔۔۔۔۔۔
پر اُسکی آنکھیں آج بھی اتنی ہی روشن ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
تم چپکے سے اُسکی تحریر پڑھنا۔۔۔
یقیناً تم اسکو لکھتا ہوا پاؤگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک بوسیدہ مگر
لازوال عنوان۔۔۔۔۔۔۔۔
تمہارے تتلی بھیجنے والے ہاتھ ۔۔۔۔
جو اُسے پسند تھے۔۔۔۔۔
اس سے لکھواتے رہینگے ۔۔۔۔۔مسلسل ۔۔۔
بلا کسی تھکن کے۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ۔۔ غیر مختتم داستان
از قلم سؔحر

0
94