میری وحشت مرا جہاں کوئی
میرے دل کو نہیں اماں کوئی
دل میں کیا ہے کیا کوئی سمجھے
کاش سمجھے نہ کچھ یہاں کوئی
اُن کی وحشت سے دل یہ زنده ہے
قلبِ عریاں میں ہے نہاں کوئی
دردِ دل کی دوا میسّر ہو
گر بنا ہے خدا یہاں کوئی
حال دل کا یہاں کہوں کس کو
اہلِ دل ہیں نہ یاں بتاں کوئی
یوں تو ہر دم ہجوم گھیرے تھا
پھر بھی تنہا رہا وہاں کوئی
نیشِ مژگاں جو دل میں ہے پیوست
یعنی هر دم ہے زخم نواں کوئی
ہاے بے کاریِ دل آفت ہے
گو ہو آشفتہ بے کراں کوئی
صدمۂ عشق کا *اثر* یہ ہوا
ہے جگر خون دل فغاں کوئی

0
12