ہے اگر تجھ کو جستجوئے حیات
جا مدینے میں دیکھ روئے حیات
نعت ہی کو حیات کہتا ہوں
نعت ہی بن گئی ہے خوئے حیات
رخ دیارِ نبی کی جانب ہے
زندگی چل پڑی ہے سوئے حیات
آج کیجے حضور کی باتیں
کیجئے مجھ سے گفتگوئے حیات
ان کی چوکھٹ کو چھو لیا میں نے
مل گیا ہے مجھے سُبوئے حیات
گنبدِ سبز دیکھ آیا ہوں
سبزگی پر ہیں رنگ و بوئے حیات
قبر میں دیدِ شاہ کا سن کر
کون رکھتا ہے آرزوئے حیات
دیدِ کوئے حضور سے پہلے
سونا سونا پڑا تھا کوئے حیات
ریگِ جاں کو حیات بخشے گی
میری پلکوں کی آب جوئے حیات

0
29