آفتاب کی کرنیں
چیرتی پرت گزریں
کم نصیب ہیں انساں
روشنی کو بھی چھوڑیں
تا قیام ضامن بھی
خوبیاں جلا بخشیں
کچھ سبب بنا نہ کچھ
ایک کنبہ سب جانیں
ذکر سے لساں تر ہو
شوق, شستگی لائیں
بھید بھاؤ سے ناصر
رنجشیں بڑھی جائیں

0
41