غم دلِ خاکسار سے نکلا
یار بھی پھر حصار سے نکلا
یاد بے چین گر کرے بے حد
اشک چشمِ نگار سے نکلا
لمحے مشکل گزر گئے ہمدم
ہجر بھی انتظار سے نکلا
کچھ تڑپ، کچھ وفا تو کچھ چاہت
تیر کچھ بیقرار سے نکلا
شعر،اشعار، شاعری و شعرا
کارواں اب کنار سے نکلا
راز ناصؔر تو راز ہو بہتر
پر وہ بھی رازدار سے نکلا

0
75