تو ہے رب کا ولی حاجی وارث علی
شان تیری بڑی حاجی وارث علی
دیوہ تیری زمیں تیرے زیرِ نگیں
تیری دھو میں مچی حاجی وارث على
آل مولی علی جان سبطین ہو
سیدی مرشدی حاجی وارث على
تیری کامل نگاہوں سے میرے پیا
میری بگڑی بنی حاجی وارث علی
تیرا نوری سراپا ہے دل میں بسا
فکر تیری بھلی حاجی وارث على
غوث و خواجہ کے صدقے میں آسان کر
سر پہ مشکل پڑی حاجی وارث على
تم نے اپنا کہا اس گنہ گار کو
ہے تری یاوری حاجی وارث على
سادگی عاجزی علم و حکمت میں بھی
شان تیری بڑی حاجی وارث على
درِ اقدس پہ آؤں سلامی کو میں
ہو عطا حاضری حاجی وارث علی
میرا دل یاد تیری سے معمور ہو
ہاں کھلا دو کلی حاجی وارث على
گزرے لمحوں کی تجدید ذیشان پر
ہو پیا ہرگھڑی حاجی وارث علی

14