دامِ بھنور میں کوئی سہارا نظر نہیں آتا
کشتیِ غم کو بھی میری کِنارہ نظر نہیں آتا
گُم ہو گیا جو گُوشۂ شہرِ خَموشاں میں اِک بار
لاکھ پکارو بھی تو وہ دوبارہ نظر نہیں آتا
ظُمتِ شب کو مرا جو زوال سمجھ بیٹھے ہیں
چڑھتا ہے سُورج تو اِک تارا نظر نہیں آتا
بے پیراہن کرنے میں گو لگا ہے زمانہ
دامنِ چاک کسی کو ہمارا نظر نہیں آتا
اب تو یہ جاں ہی جائے تو جائے ہے جمالؔ
دردِ دل کا تو مجھے چارہ نظر نہیں آتا

5