على مشکل کشا حاجت روا مولا علی حیدر
علی شیرِ خدا شاہِ زماں مولا علی حیدر
بسی ہو ان کی الفت دل میں ہر مومن پہ ہے لازم
علی ایمانِ جاں تسکینِ جاں مولا علی حیدر
عدو کے واسطے کافی ہے واللہ نعرہِ حیدر
علی وہ ہیں قوی فاتح زماں مولا علی حیدر
جو ان کا ہو گیا وہ پا گیا دونوں جہاں واللہ
على وہ ناخدا وہ سائباں مولا علی حیدر
وہ جن کو دیکھنا اہلِ محبت کی عبادت ہے
على وہ باصفا شاہِ وفا مولا علی حیدر
نہیں ثانی کوئی انکا وہ یکتائے زمانہ ہیں
علی نازِ نبی نازِ خدا مولا علی حیدر
امامِ مشرقا و مغرباں مولا علی حیدر
علی فخرِ زماں فخرِ سماں مولا على حیدر
صحابہ کی نگا میں محترم اور محتشم تم ہو
على وردِ زباں ہر مومناں مولا علی حیدر
نبیِ حق کا فرماں ہے علی مولا ہے تم سب کا
علی امدادِ فقراء و غنا مولا علی حیدر
علی عرفاں على فرقاں على غفراں علی رضواں
على امن و اماں قانون داں مولا علی حیدر
جہاں حیدر وہیں حق ہے جہاں حق ہے وہیں حیدر
على حق کا نشاں حق آشنا مولا علی حیدر
نجاتِ آخرت کے واسطے ذیشان کہتا ہے
علی دنیا و عقبی و جناں مولا علی حیدر

39