مرے ہمسفر مرے ہم نوا مرے پاس آمرے پاس آ
تجھے واسطہ مرے پیار کا مرے پاس آ مرے پاس آ
تو برس کبھی کبھی بن گھٹا مجھے پیار سے کبھی دے بھگا
اسی پیار میں تو بھی بھیگ جا مرے پاس آ مرے پاس آ
مرے دل کو ہے ترا آسرا ترے بن نہیں کوئی اہے مرا
تو زمیں مری تو ہی آسماں مرے پاس آ مرے پاس آ
وہ چراغ ہوں جو بھٹک گیا مجھے راستہ تو ذرا دکھا
مری لو کو دے کوںٔی سلسلہ مرے پاس آ مرے پاس آ
جو ہوںٔی خطا وہ معاف کر تو نہ دے مجھے کوںٔی اب سزا
جو گذر گیا اسے بھول جا مرے پاس آ مرے پاس آ
کہیں تیرے بن نہ بجھے دیا مری جان کا مری جانِ جاں
کہ چراغِ دل ہے بجھا بجھا مرے پاس آ مرے پاس آ

0
22