جس   بھی۔۔۔۔
 افسانہ نگار کی۔۔۔۔۔
یہ  تخلیق   ہے  دنیا۔۔۔ 
خالق جو بھی ہے اس حکایت کا ۔۔۔
کہانی یہ جس نے لکھی ھے ۔۔۔ 
اسے مجھ سے ملانا تم۔۔۔۔ 
میں اسکو بتاؤں گا۔۔۔ 
کہانی ایسے نہیں لکھتے۔۔۔ 
پاس گر جادوئی قوت ہو۔۔۔ 
کام گر کن سے چلتا ہو۔۔۔ 
تو لگا تماشا نہیں لیتے۔۔۔ 
بنا پوچھے کسی سے بھی  ۔۔۔ 
 نہیں کوئی  امتحان   لیتے  ۔۔۔ 
خود ہی بنا  کر   ستانا   نہیں اچھا  ۔۔ 
سب   جان   کر  پھر  بھی   آزمانا   نہیں اچھا  ۔۔
مفلسی کے نرغے میں ۔۔۔    
غربت   کے   چرخے   میں ۔۔۔۔   
کسی کو  مقید نہیں کرتے۔۔۔ 
لامکانی  کا ہو شوق تو مسکن اپنا۔۔۔ 
حرم و کلیسا و مسجد نہیں کرتے۔۔۔ 
خود اپنے  لکھے  افسانے میں ۔۔۔
کبھی کرداری شرکت نہیں کرتے۔۔۔ 
جو خود نہ سہی ہو کبھی۔۔۔    
کسی کے  ساتھ  پھر وہ  حرکت نہیں کرتے۔۔ 
ہو  اگر  دعویٰ رحمت کا ۔۔۔   
تخلیق پھر دوزخ نہیں کرتے۔۔۔ 
لالچ  بہشت  و  حور  کا   دے کر ۔۔۔ 
عبادت   سے   لذت  کا سودا نہیں کرتے۔۔۔ 
تم اسے مجھ سے ملانا بس۔۔۔   
میں اسے خود سمجھاؤں گا۔۔۔ 
کے دیکھو ایسا نہیں کرتے۔۔۔
شریعت کے شکنجوں کو یا آزاد نہیں کرتے۔۔۔ 
جذبوں کے زنداں میں یا پھر  قید نہیں کرتے۔۔۔ 
خود نورِ ہدایت  دیتے  ہیں  سینوں  کو  کھول کر  ۔۔ 
 اوتاروں  کا  یوں   وقت  برباد نہیں کرتے۔۔
یا  پہلے  مقدر  نہیں  لکھتے   ۔۔۔۔۔   
یا پھر اختیار  اختیار نہیں کرتے۔۔۔   
خاک سے بنا کے آدم کو ۔۔۔ 
 توڑا اسکی پسلی نہیں کرتے۔۔۔ 
جوڑا  آدم و حوا سا  ایک اور بنا دیتے۔۔۔ 
لکھا   ہے   جب     شریعت   میں ۔۔۔۔
 بہنوں  سے بھائی  بیاہ  نہیں کرتے۔۔۔  
بات آگے نہ بڑھ جائے ۔۔   
جو کہانی اس نے لکھی ہے  ۔۔۔
اس پر  اب  نقادی نہیں کرتے ۔۔۔
تم اسکو خود ہی کہہ دینا ۔۔۔
سنو زاہد۔۔۔۔ 
سنو ناصح ۔۔۔ 
سنو اے شیخ و عابد زمانے کے۔۔۔ 
تم اسکو خود ہی کہہ دینا ۔۔۔ 
رضا صرف یہی بولا  تھا۔۔۔ 
کے دیکھو ایسا نہیں کرتے۔۔۔ !!! 

                                         اسامہ   رضا   



0
10