ہر قدم دوریٔ منزل ہے نمایاں مجھ سے
میری رفتار سے بھاگے ہے ، بیاباں مجھ سے
درسِ عنوانِ تماشا ، بہ تغافل خوش تر
ہے نگہ رشتۂ شیرازۂ مژگاں مجھ سے
وحشتِ آتشِ دل سے ، شبِ تنہائی میں
صورتِ دود ، رہا سایہ گریزاں مجھ سے
غمِ عشاق نہ ہو ، سادگی آموزِ بتاں
کس قدر خانۂ آئینہ ہے ویراں مجھ سے
اثرِ آبلہ سے ، جادۂ صحرائے جنوں
صورتِ رشتۂ گوہر ہے چراغاں مجھ سے
بے خودی بسترِ تمہیدِ فراغت ہو جو!
پر ہے سایے کی طرح ، میرا شبستاں مجھ سے
شوقِ دیدار میں ، گر تو مجھے گردن مارے
ہو نگہ ، مثلِ گُلِ شمع ، پریشاں مجھ سے
بے کسی ہائے شبِ ہجر کی وحشت ، ہے ہے!
سایہ خورشیدِ قیامت میں ہے پنہاں مجھ سے
گردشِ ساغرِ صد جلوۂ رنگیں ، تجھ سے
آئینہ داریٔ یک دیدۂ حیراں ، مجھ سے
نگہِ گرم سے ایک آگ ٹپکتی ہے ، اسدؔ!
ہے چراغاں ، خس و خاشاکِ گلستاں مجھ سے
بحر
رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع
فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن
رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع
فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فِعْلن
رمل مثمن سالم مخبون محذوف
فاعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلن
رمل مثمن سالم مخبون محذوف
فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلاتن فَعِلن

0
240

اشعار کی تقطیع

تقطیع دکھائیں