وہ پَری زُلف جو دیکھے کَبھی حیراں ہو کر
آئینے ٹُوٹ رَہیں دَست و گِریباں ہو کر
ہم کو کیا ہوش! کہ کِس قدر دِکھائی دے ہیں؟
ہم نے دیکھا جو نہیں تَختِ سُلیماں ہو کر
اُن سے پہلے کے سَبھی مِثلِ زُلیخا جاناں
دیکھ! پھِرتے ہیں کہ اَنگُشتِ بَدَندَاں ہو کر
کون اِس بار اُنہیں حَرفِ تسّلی بَخشے؟
آج مَر جانے پہ آئے ہیں پَرِیشاں ہو کر
گَردشِ شَمس و قَمر، لَیل و نِہار و جَاذِبٓ
آخِرش جائے کہاں اُن سے گُریزاں ہو کر؟
مِرزا جَاذِبٓ

0
3