کدورت دلوں میں بساتے ہیں آپ
بظاہر محبت جتاتے ہیں آپ
پرانی وہ عادت ابھی تک نہ چھوٹی
حسیں وعدے کر کے پھنساتے ہیں آپ
زباں تیز، حاضر دماغی ملی ہے
بڑی چکنی باتیں بناتے ہیں آپ
اِدھر سے کمائے اُدھر ہے گنوائے
فحش کاموں میں دَھن لٹاتے ہیں آپ
رفیقوں عزیزوں پہ ہو خرچ کیسے
مزے عیش سارے مناتے ہیں آپ
ہیں اڈہ، کلب جب سے آباد ہوئیں
پلٹ دیر سے گھر بھی آتے ہیں آپ
نیا دور ناصؔر بڑا پُر خطر ہے
یہ تہذیب بدلی دکھاتے ہیں آپ

0
71