نعت رسول مقبول ﷺ

11 جنوری 2018

خدا نے بھیجا انہیں سب کی رہبری کے لیے
وہ بن کے آئے ہیں رحمت یہاں سبھی کے لیے
بغیر حُبّ نبی رائیگاں ہیں سب اذ کار
درود شرط ہے ذکرِ محمدی کے لیے
نہیں ہے خوف مجھے قبر کے اندھیرے کا
لحد میں آئیں گے سرکار روشنی کے لیے
زمانے بھر کے قصیدوں سے کیا غرض مجھ کو
تمہارا عشق ہی کافی ہے شاعری کے لیے
حضورِ مقتدر آقا کی شان کیا کہنا
جھکا کے سر نہ اٹھا پھر تری خوشی کے لیے
ہے شان اعلی تمہاری اے قادری دولھہ
غلاف غوث نے بھیجا ہے مولوی کے لیے
دعا یہ فیصلِ خستہ کی ہو خدا پوری
مدینے جائے یہ روضے پہ حاضری کے لیے
اشعار کی تقطیع
تبصرے