غزل

11 جنوری 2018

یہ کیا ہے جھوٹی تسلّیوں کا عجیب پہلو تلاش کرنا
سجانا کاغذ کے پھول گھر میں اور اُن میں خوشبو تلاش کرنا
تمہاری فرقت کا ہے اثر یہ کہ میری وحشت کا انتہا ہے
خود اپنی آنکھوں میں ریت بھر کر پھر اِن میں آنسو تلاش کرنا
ہے بے بسی یہ کی بےخودی ہے کہ ہے محبت کی یہ نشانی
وہ جن سے کھانا فریب دل پر انہیں کو ہر سو تلاش کرنا
یہ ڈر ہے بچّوں پہ میرے آسی یہ حال میرا گراں نہ گزرے
بجھا کے کمرے کا بلب اپنے ہوا میں جگنو تلاش کرنا
اشعار کی تقطیع
تبصرے