اوکاڑہ پاکستان

7 دسمبر 2017

کیا فر شتا تجھ کو انساں تک نہ ملے گا
اب مجھ سا کوئی آسماں تک نہ ملے گا
رستے میں گذرے گی عمر ساری اب
منزل کیا تجھ کو نشاں تک نہ ملے گا
اشعار کی تقطیع
تبصرے