اصولِ زندگی

12 اکتوبر 2017

تم لوگوں کی باتوں پہ کبھی جاؤ نا
دل اپنا کسی کو بھی کبھی دکھاؤ نا
نا اچھی ہو تو زباں پہ نا لاؤ کبھی
سچ کہنے سے تو کبھی تم گھبراؤ نا
آنا جانا تو لگا ہی رہتا ہے
کچھ مل جائے تو اس پہ تم اتراؤ نا
رب کی رحمت پر سدا امید رکھو
کچھ چھن جائے تو تم کبھی گھبراؤ نا
گر چاہتے ہو تم دکھ نا پہنچے کوئی
دل تم بھی لوگوں کا کبھی دکھاؤ نا
گر تجھ کو دیا ہے رب نے اندازِ سخن
اے ارشد اس پہ یوں تم اتراؤ نا
اشعار کی تقطیع
تبصرے