یہ زمیں یہ آسماں زینبؑ کے ہیں

11 اکتوبر 2017

یہ زمیں یہ آسماں زینبؑ کے ھیں
در حقیقت کُل جہاں زینؑب کے ھیں
چاند سورج کہکشاں زینبؑ کے ھیں
حق یہ ھے کون و مکاں زینبؑ کے ھیں
شافئی روزِِ جزا ھے ان کی ماںؑ
بھائی سردارِ جناں زینبؑ کے ھیں
تشنہ لب فاتح ھوئے ھیں جنگ کے
سب کے سب تشنہ دہاں زینبؑ کے ھیں
ماتمِ شاہِ ِہُداؑ کیوں کر رکے
ساتھ جب اشکِ رواں زینبؑ کے ھیں
تیر تلواریں جہاں پر تھک گئی
حوصلے جاگے وہاں زینب کے ہیں
دل کی حسرت ھے چلیں اس ہی جگہ
جس جگہ پر بھائی جاں زینبؑ کے ھیں
ہم کو عُظؔمیٰ مجلسوں میں یوں لگا
ہم یہاں پر میہماں زینبؑ کے ہیں
اشعار کی تقطیع
تبصرے