جب کیا شانوں کو مولاؑ پر فدا عباسؑ نے

10 اکتوبر 2017

جب کیا شانوں کو مولا پر فداعباسؑ نے
زانووے شبیرؑ پہ سجدہ کیا عباس ؑ نے
زرد چہرے دیکھ کر روتا رھا حیدر کا لال
ضبط کی کر دی تھی ایسی انتہا عباسؑ نے
جب جفا کےتیر مشکیزہ کو چھلنی کرگئے
خود کو مقتل کے حوالے کر دیا عباسؑ نے
یا الٰہی بنتِ زہراؑ کی ردا محفوظ ہو
جب گرے گھوڑے سے تو یہ کی دعا عباسؑ نے
جب نظر میں آگیا سوکھے ھوئے کوزوں کا حال
سر جھکا کر یا سکؑینہ بس کہا عباسؑ نے
شرم سے مرتا ھوں لے جانا نہ خیمہ گاہ میں
وقتِ آخر شہؑ سے کی ھے التجا عباسؑ نے
حشر تک موؑلا کے قدموں سے لپٹ کر روئےگا
اس طرح پانی کو شرمندہ کیا عباسؑ نے
آج بھی مشکِ سکیؑنہ ھے علم کے ساتھ ساتھ
دخترِ شبیر سے یوں کی وفا عباسؑ نے
آلِ زہرا سے وفاداری میں ھے سب کی نجات
یہ سبق انسانیت کو دے دیا عباسؑ نے
وار کر شانو کو عُؔظمیٰ سیّدہؑ کے لالؑ پر
سرخرو مادر کو اپنی کر دیا عباسؑ نے
اشعار کی تقطیع
تبصرے