میرے ملنے والے​ (نظم)
وہ در کھلا میرے غمکدے کا​
وہ آ گئے میرے ملنے والے​
وہ آگئی شام، اپنی راہوں
میں فرشِ افسردگی بچھانے​
وہ آگئی رات چاند تاروں
کو اپنی آزردگی سنانے​
وہ صبح آئی دمکتے نشتر
سے​ یاد کے زخم کو منانے​
وہ دوپہر آئی آستیں میں​
چھپائے شعلوں کے تازیانے​
یہ آئے سب میرے ملنے والے​
کہ جن سے دن رات واسطہ ہے​
پہ کون کب آیا، کب گیا ہے​
نگاہ و دل کو خبر کہاں ہے​
خیال سوئے وطن رواں ہے​
سمندروں کی ایال تھامے​
ہزار وہم و گماں سنبھالے​
کئی طرح کے سوال تھامے​
اشعار کی تقطیع
تبصرے