جب تری جان ہو گئی ہوگی​ (غزل)
جب تری جان ہو گئی ہوگی​
جان حیران ہو گئی ہو گی​
شب تھا میری نگہ کا بوجھ اس پر​
وہ تو ہلکان ہو گئی ہو گی​
اس کی خاطر ہوا میں خوار بہت​
وہ مِری آن ہو گئی ہو گی​
ہو کے دشوار زندگی اپنی​
اتنی آسان ہو گئی ہو گی​
بے گلہ ہوں میں اب بہت دن سے​
وہ پریشان ہو گئی ہو گی​
اک حویلی تھی دل محلے میں​
اب وہ ویران ہو گئی ہو گی​
اس کے کوچے میں آئی تھی شیریں​
اس کی دربان ہو گئی ہو گی​
کمسنی میں بہت شریر تھی وہ​
اب تو شیطان ہو گئی ہو گی​
اشعار کی تقطیع
تبصرے