واقف نہیں اِس راز سے آشفتہ سراں بھی (غزل)
واقف نہیں اِس راز سے آشفتہ سراں بھی
غم تیشۂ فرہاد بھی غم سنگِ گراں بھی
اُس شخص سے وابستہ خموشی بھی بیاں بھی
جو نِشترِ فصّاد بھی ہے اَور رگِ جاں بھی
کِس سے کہیں اُس حُسن کا افسانہ کہ جِس کو
کہتے ہیں کہ ظالم ہے، تو رُکتی ہے زباں بھی
ہاں یہ خمِ گردن ہے یا تابانیٔ افشاں
پہلو میں مِرے قوس بھی ہے، کاہ کشاں بھی
اَے چارہ گرو چارہ گرو ہم کو بتاؤ
کیا اَیسے ہی آثار نمایاں ہیں وہاں بھی
چونکی ہے وُہ کِس ناز سے، اَے صُبحِ خوش آغاز
زُلفوں کی گھٹا بھی ہے چراغوں کا دُھؤاں بھی
اشعار کی تقطیع
تبصرے