گل بدنی (نظم)
کیا شعلۂ طرّار وہ اللہُ غنی ہے
کیا لرزشِ تابندگیِ سیم تنی ہے
رشکِ مہِ کنعاں ہے غزالِ خُتنی ہے
افشاں ہے کہ آمادگیِ دُر شکنی ہے
تاروں میں بپا غلغلۂ سینہ زنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
ہر موجۂ انفاس میں دجلے کی روانی
ہر لرزشِ مژگاں میں نئی خواب فشانی
ہر لوچ میں بھیگی ہوئی شاخوں کی کہانی
ہر تان میں پربت کا برستا ہوا پانی
ہر بول میں اک چشمۂ شیریں سخنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
پلّو ہے یہ سینے پہ کہ اک موجِ حبابی
ماتھا کہ خنک صبح کی تنویرِ شہابی
پیکر ہے کہ انسان کے سانچے میں گلابی
آنکھیں ہیں کہ بہکے ہوئے دو مست شرابی
قامت کا خم و چم ہے کہ سروِ چمنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
زلفیں ہیں شبِ مالوا رخ صبحِ بہاراں
شوخی ہے کہ بھونچال ترارے ہیں کہ طوفاں
عشوے ہیں کہ شمشیر تبسم ہے کہ پیکاں
مہندی کی سجاوٹ کہ ہتھیلی پہ گلستاں
مکھڑے کی دمک ہے کہ عقیقِ یمنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
آواز میں ہے سلطنتِ زمزمہ خوانی
انداز میں ہے جنبشِ بُرّان و سنانی
ہر ایک بُنِ مو سے ابلتی ہے جوانی
اٹھتی ہے مسامات سے اک بھاپ سی دھانی
اک چادرِ خوش بو ہے کہ آنگن میں تنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
گردن میں چنن ہار کلائی میں ہے کنگن
کورا ہے جو پنڈا تو جنوں خیز ہے اُبٹن
جولاں ہے جوانی کے دھندلکے میں لڑکپن
ابھری ہوئی چولی ہے پھبکتا ہوا جوبن
گُل رنگ شلوکا ہے قبا ناروَنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
ہونٹوں میں ہے مہکار کہ ہے رات کی رانی
نقشِ قدمِ ناز ہے یا تاجِ کیانی
کشتی کا تلاطم ہے کہ نَوکار جوانی
ساحل کا خُمستاں ہے کہ پوشاک ہے دھانی
برکھا کی خنک چھاؤں ہے یا زلف گھنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
بل کھائی لٹوں میں ہے یہ پیشانیِ رخشاں
یا سایۂ ظلمات میں ہے چشمۂ حیواں
ٹیکا ہے کہ ساگر میں جواں چاند ہے غلطاں
ہاتوں پہ یہ مکھڑا ہے کہ ہے رحلِ پہ قرآں
تل ہے کہ دھنوائی ہوئی ہیرے کی کنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
کس لوچ سے چونکی ہے دُھندَلکے کو جگانے
الجھی ہوئی زلفوں میں دھواں دار فسانے
بند دُھوئے خد و خال میں نیندوں کے خزانے
انگڑائی کی جھنکار میں ندّی کے ترانے
رخسار میں چبھتی ہوئی اعضا شکنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
تانیں ہیں کہ اک فوج کھڑی لُوٹ رہی ہے
توڑا ہے کہ چھاتی کو زمیں کُوٹ رہی ہے
بِیندی ہے کہ پربت پہ کرن پھوٹ رہی ہے
انگڑائی کا خم ہے کہ دھنک ٹُوٹ رہی ہے
مکھڑا ہے یہ قامت پہ کہ نیزے پر انی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
پہلو میں خموشی ہے شبستاں میں تکلم
جلوت میں تواضع ہے تو خلوت میں تحکم
حجرے میں ہے تکرار تو مجرے میں ترنم
مسند پہ تنک موج ہے بستر پہ تلاطم
آغوش میں تلوار ہے گھونگھٹ میں بنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
پہنچا ہے سرِ بامِ حرم دیر کا طوفاں
رقصندہ ہے پھر وہ صنمِ فتنۂ دوراں
غزنی میں پکار آؤ کہ پھر کفر ہے جولاں
مُوباف کے لچکے میں لپیٹے ہوئے ایماں
اب آئے جسے حوصلۂ بت شکنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
اس سِن میں بھی پڑتی ہیں چھلاووں پہ نگاہیں
اب بھی ہیں وہی شوق کی اگلی سی کراہیں
اب بھی یہ دعا ہے کہ مِلیں پھول سی بانہیں
مر جائیں ہم اے جوش بتوں کو جو نہ چاہیں
گُھٹّی میں پڑی عاشقی و برہمنی ہے
کیا گل بدنی گل بدنی گل بدنی ہے
کیا گل بدنی ہے
اشعار کی تقطیع
تبصرے